Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - لا علمی میں ادا کی جانے والی نمازوں کا کیا حکم ہے؟

لا علمی میں ادا کی جانے والی نمازوں کا کیا حکم ہے؟

موضوع: نماز  |  نماز با جماعت   |  با جماعت نماز کے احکام   |  نماز وتر

سوال پوچھنے والے کا نام: عاقب غفار       مقام: ساہیوال، پاکستان

سوال نمبر 1130:
مفتی صاحب مجھے یہ با ت پہلے معلوم نہیں تھی کہ فرض نماز کے آخری دو رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد کو ئی سورہ ملانے کی ضروت نہیں جو نمازیں میں نے اس لا علمی میں ادا کی وہ قبول ہو جائے گی؟ برائے مہربانی جماعت کھڑی ہونے کے بعد تمام رکعت میں شامل ہونے کا طریقہ بتا دیں اور یہ بھی بتا دیں کہ دعائے قنوت کے بغیر وتر ادا ہو جاتے ہیں؟ شکریہ

جواب:

لاعلمی کی صورت میں پڑھی جانے والی نمازیں صحیح ہیں۔

وتر میں دعائے قنوت پڑھنا مسنون ہے، اگر دعائے قنوت نہیں آتی تو تین مرتبہ سورۃ الاخلاص یا کوئی بھی دعا پڑھ لینا جائز ہے۔ البتہ دعا قنوت پڑھنا مسنون ہے، لہذا اسے جلدی زبانی یاد کرنا چاہیے اور اس کا پڑھنا افضل ہے۔

اگر کوئی رکعت چھوٹ جائے تو کیسے ادا کریں گے؟
اس کا جواب گزر چکا ہے، مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-03-08


Your Comments