کیا نماز تراویح میں سجدہ تلاوت کی نیت کرنا شرط ہے؟

سوال نمبر:4277
کیا تراویح میں سجده تلاوت آگیا تو نیت باندھنا شرط ہے؟ اگر نیت نہیں باندھی تھی اور سجدہ آگیا تو کیا حکم ہے؟

  • سائل: زین البشرمقام: بھارت
  • تاریخ اشاعت: 21 جولائی 2017ء

زمرہ: نماز تراویح

جواب:

رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا:

إنَّما الأَعمالُ بالنِّيَّات.

اعمال کا دار و مدار تو بس نیتوں پر ہے۔

بخاری، الصحيح، 1: 3، رقم: 1، بيروت، لبنان، دار ابنِ کثير اليمامة

عبادت کے ہر عمل کے لیے نیت کرنا ضروری ہے۔ نیت دل کے ارادے کو کہا جاتا ہے۔ زبان سے نیت کے الفاظ ادا کرنا بہتر ہے۔ تلاوت کے دران جب آیتِ سجدہ آ جائے تو سجدہ کیا جائے گا۔ یہ سجدہ کرنا نیت سے ہی ہوگا۔ تاہم بہتر یہ ہے کہ امام صاحب مقتدیوں کو پہلے سے آگاہ کر دیں کہ فلاں رکعت میں سجدہ تلاوت ہوگا۔ یوں مقتدی نماز کی نیت کرتے ہوئے دل میں سجدہ تلاوت کی نیت بھی کر لے گا۔ سجدہ تلاوت کے لیے الگ سے الفاظ کہنے کی ضرورت نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟