کیا دیور کی یتیم اولاد اور بیوہ کو صدقہ دیا جا سکتا ہے؟

سوال نمبر:3149
السلام علیکم! میرے دیور فوت ہو چکے ہیں، ان کا 8 سال کا بیٹا ہے اور بیوی پرائیوٹ سکول ٹیچر ہے۔ ان کا مشکل سے گزر بسر ہوتا ہے۔ کیا انہیں صدقہ خیرات کے پیسے بغیر بتائے دیئے جا سکتے ہیں؟ وہ بیوہ اور یتیم میں‌ آتے ہیں اور بجائے کسی باہر کے بندے کو صدقہ دینے کے انہیں دے سکتے ہیں‌ یا نہیں؟

  • سائل: رابعہمقام: پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 19 اپریل 2014ء

زمرہ: حقوق العباد

جواب:

صدقہ دیتے ہوئے ان کو بتانا ضروری نہیں ہے، آپ ان کے گھر جائیں اور آتے ہوئے عزت کے ساتھ ان کو جتنا ہو سکے دے آئیں۔ آپ یہ کہہ دیں کہ یہ ہماری طرف سے رکھ لیں کہیں کام آ جائے گا۔ یہ بہتر عمل ہے کہ پہلے قریبی رشتہ دار جو حق رکھتے ہوں ان کو دیا جائے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟