کیا ہر کسی کا رزق لکھا جا چکا ہے یا دعا سے بدل بھی سکتا ہے؟

سوال نمبر:707
رزق کے بارے میں‌ اسلام کا کیا نظریہ ہے؟ کیا ہر کسی کا رزق لکھا جا چکا ہے یا دعا سے بدل بھی سکتا ہے؟

  • سائل: عمر فاروقمقام: نورکوپنگ، سویڈن
  • تاریخ اشاعت: 03 مارچ 2011ء

زمرہ: ایمان بالقدر

جواب:

ہم تقدیر جاننے کے مکلف نہیں ہیں بلکہ تقدیر پر ہمارا ایمان ہے کہ یہ اللہ تعالیٰ کا علم ہے جو کچھ لکھا گیا ہے اللہ تعالیٰ کے علم میں ہے۔ رزق کے بارے میں قرآن مجید میں جا بجا واضح فرمایا گیا کہ رزق حلال کی تلاش کرو۔ پاک چیزیں اور حلال کھایا کرو۔ ہم اس فرمان کے مکلف ہیں البتہ حدیث پاک میں آتا ہے کہ :

لَا يُرُدُّ القضاءَ اِلا الدُّعاءُ.

(رواه الترمذی)

تقدیر نہیں ٹلتی مگر دعا سے۔

علماء کرام فرماتے ہیں کہ تقدیر کی دو اقسام ہیں :

  • تقدیر معلق
  • تقدیر مبرم

معلق تقدیر دعا اور صدقات سے بدل جاتی ہے۔ اور مبرم تقدیر وہ اٹل ہے اس میں کوئی تبدیلی نہیں ہوتی۔ (واللہ اعلم)

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟