کیا دوران نکاح منکوحہ کے والد کا نام غلط بولنے سے نکاح قائم ہو جاتا ہے؟

سوال نمبر:5680
السلام علیکم! میرا سوال یہ ہے کہ اگر نکاح خوان لڑکی کا نام تو درست بولے لیکن اس کے والد کا نام غلط بولے اور لڑکے اور اس کے والد کا نام درست بولے تو نکاح کا کیا حکم ہے؟

  • سائل: محمد ارحانمقام: پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 21 فروری 2020ء

زمرہ: نکاح

جواب:

عاقل و بالغ لڑکے اور لڑکی کی رضامندی سے حق مہر کے بدلے گواہوں کی موجودگی میں ایجاب و قبول سے نکاح قائم ہو جاتا ہے۔ اس لیے اگر لڑکا اور لڑکی جن کا پہلے سے نکاح طے ہوچکا تھا اور گواہوں کی موجودگی میں انہی کا ایجاب و قبول کروایا گیا تو نکاح منعقد ہو گیا ہے، خواہ لڑکی کے والد کا نام غلط ہی بولا گیا ہو۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟