Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - وقت کی کمی کے سبب رکوع و سجود کی تسبیحات ایک بار پڑھنا جائز ہے؟

وقت کی کمی کے سبب رکوع و سجود کی تسبیحات ایک بار پڑھنا جائز ہے؟

موضوع: نماز  |  نماز کی سنتیں

سوال پوچھنے والے کا نام: کریم       مقام: لاہور

سوال نمبر 5092:
السلام علیکم! اگر نماز کا وقت کم ہونے کی صورت میں کیا رکوع و سجود کی تسبیحات ایک بار پڑھ لینے سے نماز میں کوئی اثر پڑتا ہے؟

جواب:

رکوع و سجود میں تین تین بار تسبیحات پڑھنا سنت ہے، ایک بار پڑھنے سے بھی نماز ہو جائے گی مگر یہ مناسب نہیں۔ تین بار تسبیحات کی ادائیگی میں زیادہ وقت نہیں لگتا، اس لیے کوشش کریں کہ تسبیحات تین تین بار ہی ادا کریں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2018-10-15


Your Comments