Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا ہبہ شدہ جائیداد بھی ترکہ میں تقسیم ہوتی ہے؟

کیا ہبہ شدہ جائیداد بھی ترکہ میں تقسیم ہوتی ہے؟

موضوع: وراثت کی تقسیم

سوال پوچھنے والے کا نام: اویس ناصر       مقام: لاہور

سوال نمبر 5037:
السلام علیکم مفتی صاحب! میرے والدِ محترم کی وفات کے بعد میری والدہ کا ان کے چھوٹے بھائی یعنی میرے چاچو سے نکاح ہو گیا۔ تب میں‌ اور مجھ سے بڑی بہن چھوٹے تھے۔ ہمارے سوتیلے والد یعنی ہمارے چاچو نے ہماری پرورش کر کے شادیاں کیں۔ میرے دادا نے وصال سے پہلے جائیداد میں سے میرے والد کا حصہ میرے نام منتقل کر دیا اور تمام قانونی کاروائی بھی مکمل کر دی گئی۔ اب اگر میں وہ حصہ فروخت کرتا ہوں‌ تو اس میں سے مجھے اور میرے سوتیلے والد کو حصہ ملے گا۔ میرا سوال یہ ہے کہ اس کی تقسیم کیسے ہوگی؟ میرے والد، والدہ، سگی بہن اور سوتیلی بہن کو کیا ملے گا؟

جواب:

جو جائیداد آپ کے دادا نے اپنی زندگی میں آپ کو دی تھی وہ آپ کے لیے ہبہ ہے اور اب آپ کی ہی ملکیت ہے۔ حضرت جابر سے مروی حدیثِ مبارکہ میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی زندگی میں کیے جانے والے ہبہ کو درست قرار دیا ہے:

قَضَى النَّبِيُّ صلی الله علیه وآله وسلم بِالعُمْرَى أَنَّهَا لِمَنْ وُهِبَتْ لَهُ.

عمریٰ (زندگی کے لیے ہبہ) کے بارے میں فیصلہ فرمایا کہ یہ اسی کا ہے جس کو ہبہ کیا گیا ہے۔

بخاري، الصحیح، كتاب الهبة وفضلها، باب ما قيل في العمرى والرقبى أعمرته الدار فهي عمرى جعلتها له (واستعمركم فيها) جعلكم عمارا، 2: 925، رقم: 2482، بیروت، لبنان: دار ابن كثير اليمامة

اور حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے ہی ایک اور روایت میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

أَيُّمَا رَجُلٍ أُعْمِرَ عُمْرَى لَهُ وَلِعَقِبِهِ، فَإِنَّهَا لِلَّذِي أُعْطِيَهَا، لَا تَرْجِعُ إِلَى الَّذِي أَعْطَاهَا، لِأَنَّهُ أَعْطَى عَطَاءً وَقَعَتْ فِيهِ الْمَوَارِيثُ.

جس شخص کو او ر اس کے وارثوں کو تاحیات کوئی چیز دی گئی سو یہ چیز اسی کے لیے ہے جس کو دی گئی ہے وہ چیز دینے والے کی طرف نہیں لوٹے گی کیونکہ اس نے ایسی چیز دی ہے جس میں وراثت جاری ہوگی۔

مسلم، الصحیح، كتاب الهبات، باب العمرى ، 3: 1245، رقم: 1625، بیروت، لبنان: دار احیاء التراث العربي

اس لیے جب کوئی اپنی کسی چیز کو زندگی میں ہبہ کر دے تو وہ اسی کی ملکیت ہو جاتی ہے جس کو ہبہ کی گئی ہو اور پھر اس چیز کو ہبہ کرنے والے کی وراثت شمار نہیں کیا جاتا۔ علامہ شامی فرماتے ہیں:

وَتَتِمُّ الْهِبَةُ بِالْقَبْضِ الْکَامِلِ.

اور ہبہ کامل قبضہ سے مکمل ہوجاتا ہے۔

ابن عابدین شامي، ردالمحتار، 8: 435، بیروت: دارلفکر

  لہٰذا یہ جائیداد اب آپ کی ملکیت ہے۔ آپ زندگی میں اسے فروخت کر کے جہاں چاہیں استعمال کر سکتے ہیں۔ یہ جائیداد آپ کے دادا کی وراثت کے طور پر تقسیم نہیں ہوگی اس لیے کوئی دوسرا وارث اس میں شریک بھی نہیں ہے۔ آپ کے بقول آپ کے دادا نے آپ کی سگی بہن کے لیے ہبہ نہیں کیا‘ اس لیے ہمارا مشورہ ہے کہ آپ اس بہن کو مناسب حصہ دیں تاکہ وہ محروم نہ رہے۔ علاوہ ازیں اس ہبہ شدہ جائیداد میں کوئی آپ کے ساتھ شریک نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2018-09-25


Your Comments