Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - اگر امام کی قرات غلط ہے تو مقتدی کے لیے کیا حکم ہے؟

اگر امام کی قرات غلط ہے تو مقتدی کے لیے کیا حکم ہے؟

موضوع: نماز  |  عبادات  |  شرائط امامت

سوال نمبر 480:
اگر امام کی قرات غلط ہے تو مقتدی کے لیے کیا حکم ہے؟

جواب:

اگر امام کی قرات درست نہ ہو اور مقتدی امام سے بہتر قرات کر سکتا ہو تو مقتدی کے لیے حکم ہے کہ وہ جماعت کی امامت کرائے۔ حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :

إِذَا کَانُوْا ثَلَاثَةً فَلْيَؤُمَّهُمْ اَحَدُهُمْ. وَأَحَقُّهُمْ بِالإِمَامَةِ اَقْرَؤُهُمْ.

مسلم، الصحيح، کتاب المساجد و مواضع الصلاة، باب من أحق بالإمامة؟، 1 : 464، رقم : 672

’’جب تین نمازی ہوں تو ان میں سے ایک امامت کرے، اور ان میں امام بننے کا سب سے زیادہ مستحق وہ شخص ہے جسے قرآن کا سب سے زیادہ علم ہو۔‘‘

اگر مقتدیوں میں سے کسی کی بھی قرات اتنی صحیح نہ ہو تو بلاتکلف ان میں سے کسی کو امام بنا لیا جائے اور اس کی اقتداء میں نماز ادا کی جائے۔ ترک جماعت کسی طور جائز نہیں کیونکہ نماز باجماعت کی اتنی تاکید ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا :

اَلصَّلَاةُ الْمَکْتُوْبَةُ وَاجِبَةٌ خَلْفَ کُلِّ مُسْلِمٍ بَرَّا کَانَ أَوْ فَاجِرًا اَوْ إِنْ عَمِلَ الْکَبَائِرَ.

ابو داؤد، السنن، کتاب الصلاة، باب امامة البر و الفاجر، 1 : 233، رقم : 594

’’تم پر فرض نماز لازمی ہے ہر مسلمان کے پیچھے، نیک ہو یا بد، خواہ کبیرہ گناہ کا مرتکب ہو۔‘‘

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔


Your Comments