Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا اذان سے پہلے نماز ادا کرنا درست ہے؟

کیا اذان سے پہلے نماز ادا کرنا درست ہے؟

موضوع: نماز  |  فجر

سوال پوچھنے والے کا نام: محبوب الرحمان عزیز       مقام: کوئٹہ

سوال نمبر 4453:
میں‌ نے فجر کی نماز ادا کی، مگر مجھے یقین نہیں‌ تھا کہ آذان ہو چکی ہے یا نہیں۔ کیا نماز ادا ہوگئی یا اس کی قضا پڑھنا ضروری ہے؟

جواب:

فرض نماز کی ادائيگی اس کے وقت میں ہی درست ہے، چاہے اذان کے بعد ادا کی جائے یا اذان سے پہلے‘ نماز کا وقت شروع ہونے سے پہلے ادا کی گئی نماز درست نہیں۔ کیونکہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:

فَإِذَا قَضَيْتُمُ الصَّلاَةَ فَاذْكُرُواْ اللّهَ قِيَامًا وَقُعُودًا وَعَلَى جُنُوبِكُمْ فَإِذَا اطْمَأْنَنتُمْ فَأَقِيمُواْ الصَّلاَةَ إِنَّ الصَّلاَةَ كَانَتْ عَلَى الْمُؤْمِنِينَ كِتَابًا مَّوْقُوتًا.

پھر (اے مسلمانو!) جب تم نماز ادا کر چکو تو اللہ کو کھڑے اور بیٹھے اور اپنے پہلوؤں پر (لیٹے ہر حال میں) یاد کرتے رہو، پھر جب تم اطمینان پالو تو نماز کو (حسبِ دستور) قائم کرو۔ بیشک نماز مومنوں پر مقررہ وقت کے حساب سے فرض ہے۔

النساء، 4: 103

اذان‘ نماز کا وقت شروع ہونے کا اعلان نہیں ہوتا بلکہ نماز کا وقت اس سے پہلے ہی شروع ہو چکا ہوتا ہے۔ اذان کا مقصد جماعت کے لیے لوگوں کو اکھٹا کرنا ہوتا ہے اس لیے اذان نماز کا وقت شروع ہونے کے بعد دی جاتی ہے۔ اگر آپ نے بھی فجر کے وقت میں نمازِ فجر ادا کی ہے تو نماز ہوگئی، قضاء پڑھنے کی ضرورت نہیں۔ لیکن اگر نماز کا وقت ہی شروع نہیں ہوا تھا تو نماز لوٹانا ضروری ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2017-10-27


Your Comments