Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا زانیہ سے نکاح منعقد ہو جاتا ہے؟

کیا زانیہ سے نکاح منعقد ہو جاتا ہے؟

موضوع: نکاح   |  حاملہ کی عدت   |  زنا و بدکاری

سوال پوچھنے والے کا نام: آیان ثناءاللہ       مقام: کوٹ مومن

سوال نمبر 4111:
چند دن قبل زید کی شادی ہوئی ہے لیکن پہلی رات ہی لڑکی کے بتانے پر معلوم ہوا کہ لڑکی کسی اور لڑکے سے بدکاری کی وجہ سے ایک ماہ کی حاملہ ہے۔ علاج کے ذریعے حمل ختم کر دیا گیا۔ کیا ان کا نکاح منعقد ہوا؟

جواب:

ارشادِ باری تعالیٰ ہے:

وَاُولَاتُ الْاَحْمَالِ اَجَلُهُنَّ اَنْ يَّضَعْنَ حَمْلَهُنَّ ط

اور حاملہ عورتیں (تو) اُن کی عدّت اُن کا وضعِ حمل ہے۔

الطلاق، 65: 4

علامہ شوکانی لکھتے ہیں:

قال أبو حنيفة بل تعتد بوضعه ولو کان من زنا لعموم الآية.

امام ابو حنیفہ رحمہ اﷲ نے فرمایا: بلکہ حاملہ کی عدت وضع حمل ہے۔ اگرچہ حمل زنا سے ہو کیونکہ آیت مبارکہ عام ہے۔

الشوکاني، نيل الأوطار، 7: 89، بيروت: دار الجيل

عورت کو حمل چاہے نکاح سے ٹھہرے یا زنا سے، دورانِ حمل اس کا نکاح صرف اسی شخص سے نکاح منعقد ہوگا جس کے ساتھ مباشرت کی وجہ سے حمل ٹھہرا ہے۔ وضع حمل تک کسی اور مرد سے اس کا نکاح منعقد نہیں ہوگا۔ اس لیے زید کے ساتھ جو نکاح ہوا وہ سرے سے منعقد ہی نہیں ہوا۔ بقول آپ کے صفائی کروا کر حمل زائل کر دیا گیا ہے اور رحم خالی ہو گیا ہے، اب اگر زید اور لڑکی رضامند ہوں تو دوبارہ نکاح کر کے بطور میاں بیوی رہ سکتے ہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2017-01-20


Your Comments