Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا بیٹے کی موجودگی میں مورث کی بہنوں کو حصہ ملے گا؟

کیا بیٹے کی موجودگی میں مورث کی بہنوں کو حصہ ملے گا؟

موضوع: وراثت کی تقسیم

سوال پوچھنے والے کا نام: کفایت الرحمٰن       مقام: پاکستان

سوال نمبر 3842:
السلام علیکم! محترم فقہائے دین اس بارے میں کیا جواب دیں گے کہ مُتوفی یعقوب کا اک گھر ہے جو اس نے اپنی حیات میں لیا تھا۔ یعقوب کے ورثا میں اس کی 3 بہنیں، ایک بیوہ جس نے دوسری شادی کی ہے اور ایک بیٹا سلمان شامل ہے۔ کیا یعقوب کی وراثت میں سے اس کی بہنوں کو حصہ ملے گا؟ جبکہ بیٹا سلمان ابھی 7 سال کا ہے اور اسکی پرورش ابھی ماں ہی کررہی ہے۔

جواب:

مرحوم یعقوب کی تجہیز و تکفین پر اٹھنے والے اخراجات کے بعد اس کی منقولہ و غیرمنقولہ کل جائیداد میں سے آٹھواں حصہ (1/8) اس کی بیوہ کو ملے گا۔ باقی تمام جائیداد اس کے بیٹے کو ملے گی۔ بیٹے کی موجودگی میں بہن وارث نہیں ہوتی، اس لیے مرحوم کی جائیداد میں اس کی بہنوں کو کچھ نہیں ملے گا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2016-03-15


Your Comments