کیا ورزش کرتے وقت تلاوت سننا جائز ہے؟

سوال نمبر:3380

السلام علیکم! کیا فرماتے ہیں علمائے دین و مفتیان شرع متین مسائل ذیل میں‌ کہ:

1) ایک شخص کو میوزک سننے کا شوق ہے۔ تو جواب طلب امر یہ ہے کہ کیا سابقہ (دُف) پر قیاس کرتے ہوئے موجودہ دور کی میوزک خواہ وہ جھنکار کے ساتھ ہو یا ہلکی سُر والی، جس میں‌ کوئی گانا نہ ہو، شریعت مطہرہ میں‌ اس کے سننے کا جواز ہے؟

2) اسی طرح جسمانی ورزش کرتے وقت وہ جہاں میوزک،گانا سنتا ہے وہیں‌ کبھی کبھی قرآن کریم کی تلاوت بھی بذریعہ کیسٹ یا موبائل سنتا ہے،تو کیا بوقت ورزش تلاوت کلام الہی کا سننا جائز ہوسکتا ہے، اس میں‌ کوئی کراہت تو نہیں؟

براہ کرم مدلل ومحول جواب عنایت فرمائیں۔

  • سائل: محمد فیاضمقام: کولکاتا، ہندوستان
  • تاریخ اشاعت: 08 دسمبر 2014ء

زمرہ: موسیقی/قوالی   |  رقص و وجد   |  تلاوت‌ قرآن‌ مجید

جواب:

1۔ سُر، ساز، موسیقی اور رقص کچھ شرائط و علل کے ساتھ جائز ٹھہرائے جاتے ہیں۔ اگر وہ شرائط نہ پائی جائیں تو موسیقی ناجائز ہوتی ہے۔ اس کی مزید وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجئے:

  1. سر، ساز اور وجد و رقص (حصہ اول)
  2. سر، ساز اور وجد و رقص (حصہ دوم)
  3. سر، ساز اور وجد و رقص (حصہ سوم)

ورزش کرتے ہوئے تلاوتِ قرآنِ مجید کیسٹ یا موبائل پر لگا کر سن سکتے ہیں، اس میں کوئی حرج نہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟