Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - والد کی حیات میں فوت ہونے والے بیٹے کو وراثت میں حصہ کیوں نہیں ملتا ہے؟

والد کی حیات میں فوت ہونے والے بیٹے کو وراثت میں حصہ کیوں نہیں ملتا ہے؟

موضوع: وراثت کی تقسیم

سوال پوچھنے والے کا نام: محمود امجد قادری       مقام: ملتان، پاکستان

سوال نمبر 3079:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ والد کی حیات میں فوت ہونے والے بیٹے کو وراثت میں حصہ کیوں نہیں دیا جاتا ہے۔ وضاحت فرمائیں۔ جزاک اللہ

جواب:

وراثت میت کے قریبی رشتہ داروں کو ملتی ہے، اس لیے قریبی کے زندہ ہوتے ہوئے دور والے محروم ہو جاتے ہیں۔ اس لیے جب بیٹا زندہ ہو تو پوتے کو نہیں ملتا، اسی طرح باپ کے ہوتے ہوئے دادا کو نہیں ملتا۔ اس میں حکمت یہ ہے کہ اگر سب قریبی اور دور والوں کو حصہ دیا جائے تو وہ شاید کسی کو بھی فائدہ نہ دے یعنی اتنی کم مقدار میں ملے۔ مثلا ایک بندہ فوت ہو اس کے باپ، دادا، بیٹوں، بیٹیوں اور پوتے، پوتیوں یا پھر اوپر اور نیچے تک جتنے لوگ بھی زندہ ہوں سب میں تقسیم کیا جائے۔ لہذا اس کی یہی حکمت ہے کہ پہلے قریبی وارث حصہ پائیں۔ پھر اگر قریبی نہیں ہیں تو اس کے بعد والے، پھر اگر وہ بھی نہیں ہیں تو تیسرے درجے والے حصہ پائیں گے۔ المختصر شرعا اقرب (قریب والے) کے ہوتے ابعد (دور والے) کو نہیں ملتا لیکن پاکستانی قانون کے مطابق پوتے کو دادا کی وراثت سے حصہ ملتا ہے جب اس کا والد فوت ہو جائے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2014-02-15


Your Comments