Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا اہل تشیع کو شاہ جی کہنا صحیح ہے؟

کیا اہل تشیع کو شاہ جی کہنا صحیح ہے؟

موضوع: معاملات

سوال پوچھنے والے کا نام: شیر علی       مقام: تلہ کنگ

سوال نمبر 2654:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ سر میرا سوال یہ ہے کہ آج کل رواج بن گیا ہے کہ جو بھی اہل تشیع ہے اس کو شاہ جی کہ لقب سے پکارا جاتا ہے۔ یہ نہیں‌ دیکھا جاتا کہ یہ بندہ اہل بیت سے ہے یا نہیں۔ اس طرح سید اور اہل تشیع کی پہچان ختم ہو جاتی ہے۔ برائے مہربانی اس بارے میں‌ رہنمائی فرمائیں۔

جواب:

شاہ فارسی زبان کا لفظ ہے، اسم مذکر ہے، جس کے معانی ہیں : آقا، مالک، بادشاہ، سلطان، فقیروں کا لقب، شطرنج کا ایک مہرہ، نوشہ، دولہا۔ بڑے کے لیے بھی شاہ کا لفظ بولا جاتا ہے۔ برصغیر پاک وہند میں اسے سید کے نام کے ساتھ خاص کر دیا گیا ہے۔ حالانکہ شاہ یا سید کوئی ذات نہیں ہے۔ لہذا جو بھی ان القابات کے قابل ہو اسے ضرور ان سے پکارنا چاہیے۔ لیکن ہر چرسی، بھنگی اور نشئی کو شاہ جی، پیر جی اور دیگر القابات دے کر سر پہ نہیں چڑھا لینا چاہیے کیونکہ یہ اس کی بربادی کا سبب بنتے ہیں۔ اللہ تعالی اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نزدیک اسی کا درجہ بلند ہے جو ان کے احکامات کی پیروی کرتا ہے اور ان سے محبت کرتا ہے، جو اللہ تعالی اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے محبوب ہیں۔

مزید مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں
سید کون ہیں؟ کیا ان کی تعظیم لازمی ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2013-08-24


Your Comments