Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا مشروط طلاق واقع ہو جاتی ہے؟

کیا مشروط طلاق واقع ہو جاتی ہے؟

موضوع: طلاق

سوال پوچھنے والے کا نام: علی نواز       مقام: لاہور

سوال نمبر 2615:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ طلاق کے ان تین بیانات کے متعلق مجھے بتا دیں۔ بیوی کو شوہر یہ کہتا ہے۔۔۔ 1۔ اگر تم میرے بھائی سے بات کرو گی تو تمہیں طلاق دے دوں‌ گا۔ 2۔ اگر تم میرے بھائی سے بات کرو گی تو تمہیں طلاق ہو جائے گی۔ 3۔ اگر تم میرے بھائی سے بات کرو گی تو تمہیں طلاق ہے۔ ان تین جملوں کے بارے میں‌ طلاق سے متعلق کیا احکامات ہوں گے؟ برائے مہربانی اس کا جواب دے دیں۔

جواب:

پہلی صورت میں طلاق واقع نہیں ہو گی۔ کیونکہ آپ خبر دے رہے ہیں کہ طلاق دے دونگا لیکن دی نہیں ہے نہ ہی یہ شرط لگائی ہے کہ ہو جائے گی۔ جبکہ آخری دونوں صورتوں میں اگر آپ کی بیوی آپ کے بھائی سے بات کرے گی تو طلاق واقع ہو جائے گی۔ یہاں چونکہ صرف لفظ طلاق کا ذکر ہے اس لیے ایک طلاق ہو گی۔ عدت میں دوبارہ رجوع کر سکتے ہیں۔ جب تک بات نہیں کرے گی طلاق واقع نہیں ہو گی۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2013-07-04


Your Comments