Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - طلاق کی نیت کے بغیر 'تم میری طرف سے آزاد ہو' کہنا کیسا ہے؟

طلاق کی نیت کے بغیر 'تم میری طرف سے آزاد ہو' کہنا کیسا ہے؟

موضوع: طلاق   |  طلاق بائن

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد ایوب       مقام: راولپنڈی، پاکستان

سوال نمبر 2580:
السلام علیکم میں نے ایک دفعہ بیوی کو ڈانٹ دیا تو اس نے جواب میں مجھے کہا ک آئندہ اگر آپ نے مجھے ڈانٹا تو میں آپ کی شکایت آپ کے والد صاحب کو لگا دو گی اور اسی بحث میں میں نے بیوی سے کہہ دیا ک تم میری طرف سے آزاد ہو جو مرضی کرنا ہے کرو تمہارا میرا کوئی تعلق نہیں ہے میں اپنی زندگی ہونے والی اولاد کے ساتھ گزار لوں گا۔ اس ساری گفتگو میں نہ تو کوئی طلاق کا مذاکرہ چل رہا تھا اور نہ ہی بیوی طلاق کا مطالبہ کر رہی تھی۔ میں نے صرف اس خاص مسئلے کے اعتبار سے بیوی کو یہ جملہ بولاَ آپ ارشاد فرمائیں؟

جواب:

فقہائے کرام فرماتے ہیں:

الکنايات لايقع الطلاق الا بالنية او بدلالة الحال

'کنایات سے صرف نیت ہو یا دلالت حال تو طلاق واقع ہو گی'

  1. برہان الدین علی المرغینانی، المتوفی 593ھ، الہدایۃ شرح البدایہ، 1 : 241، المکتبۃ اسلامیۃ۔
  2. الشیخ نظام وجماعۃ من علماء الہند، الفتاوی الہندیۃ، 1 : 374، دار الفکر، سن اشاعت 1411ھ

مذکورہ بالا عبارت سے معلوم ہوا جب اشارہ کنایہ الفاظ بولے جائیں یعنی صریح طلاق کا لفظ نہ بولا جائے تو طلاق دو صورتوں میں واقع ہوتی ہے۔ پہلی صورت یہ ہے کہ جب یہ الفاظ طلاق کی نیت سے بولے جائیں، دوسری صورت یہ ہے کہ جب ماحول ایسا پایا جائے یا ان الفاظ سے کچھ اور مراد نہ لیا جائے مثلا عورت طلاق کا مطالبہ کر رہی ہو۔ اس وقت کہہ دیا جائے تم آزاد ہو، فارغ ہو، تیرا میرا تعلق ختم وغیرہ وغیرہ تو طلاق بائن ہو جاتی ہے، یا پھر صورت حال ایسی ہو کہ اس کنایہ لفظ سے مراد طلاق ہی لی جا سکتی ہو کوئی اور معنی نہ نکلتا ہو۔

جیسا کہ آپ کی بولی ہوئی عبارت سے کوئی اور معنی نہیں لیا جا سکتا ہے کیونکہ آپ نے اس کو پکڑا ہوا ہے نہ ہی کمرے میں بند کیا ہوا ہے، جس سے اس کو آزاد کر رہے ہو۔ پھر اس کی وضاحت بھی کر رہے ہیں کہ تمہارا میرا تعلق نہیں ہے، میں اپنی زندگی ہونے والی اولاد کی ساتھ گزار لوں گا۔ اس ساری گفتگو سے معلوم ہوتا ہے کہ آپ نے اپنی بیوی کو اپنی زندگی سے آزاد کیا ہے۔ اس کے ساتھ تعلق نہ ہونے کا بتا کر وضاحت کر دی ہے۔ مزید آئندہ زندگی گزارنے کا پلان بھی بتا دیا ہے۔ خود بھی ذرا ٹھنڈے دماغ کے ساتھ سوچنا کہ اس سے کیا مراد ہے؟ کیا طلاق کے علاوہ اس عبارت کا کوئی اور مقصد نکلتا ہے؟

لہذا آپ کے بولے ہوئے ان الفاظ سے طلاق بائن واقع ہو گئی ہے، جس سے آپ کا نکاح ختم ہو چکا ہے، عدت کے بعد عورت آزاد ہے جہاں چاہے نکاح کر سکتی ہے۔ اگر آپ دونوں رضامند ہوں تو عدت کے اندر بھی اور عدت کے بعد بھی دوبارہ نکاح کر کے بطور میاں بیوی رہ سکتے ہیں۔ لیکن یاد رہے آپ دونوں کے دوبارہ نکاح کرنے کی صورت میں آپ کے پاس زندگی میں ایک بار طلاق دینے کا حق رہ جائے گا کیونکہ دو طلاقیں واقع ہو چکی ہے۔ جب بھی آپ نے دوبار طلاق دے دی تو تین پوری ہو جائیں گی۔ پھر رجوع کی گنجائش نہیں رہے گی۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2014-07-10


Your Comments