زکوٰۃ کا نصاب کیا ہے؟

سوال نمبر:257
زکوٰۃ کا نصاب کیا ہے؟

  • تاریخ اشاعت: 24 جنوری 2011ء

زمرہ: عبادات  |  زکوۃ

جواب:

زکوٰۃ کے نصاب کی کم از کم مقدار ساڑھے سات تولے سونا یا ساڑھے باون تولے چاندی کی مالیت کے برابر ہے جو سال کے جمع شدہ مال پر اڑھائی فیصد کی شرح سے مقرر کی گئی ہے۔ یہ مال کی کم سے کم مقدار ہے جس پر زکوٰۃ کی فرضیت عائد ہوتی ہے۔ اس سے انکار انسان کو دائرہ اسلام سے ہی خارج کر دیتا ہے اور اس سے پہلو تہی مسلمان کے ایمان و اسلام کو خطرہ میں ڈال دیتی ہے۔

1. شرنبلالی، نور الإيضاح، 1 : 147
2. زحيلی، الفقه الاسلامی و ادلته، 2 : 733
3. جزيری، کتاب الفقه علی المذاهب الأربعة، 1 : 958

ارشادِ باری تعالیٰ ہے :

وَاٰتُوا الزَّکٰوة.

’’اور زکوٰۃ دیا کرو۔‘‘

 البقره، 2 : 43

وَاَقَامُوا الصَّلٰوةَ وَاٰتَوُ الزَّکٰوةَ لَهُمْ اَجْرُهُمْ عِنْدَ رَبِّهِمْ.

’’اور نماز قائم رکھی اور زکوٰۃ دیتے رہے ان کے لئے ان کے رب کے پاس ان کا اجر ہے۔‘‘

البقرة، 2 : 277

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟