Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا دوسری شادی کی صورت میں پہلے خاوند کے وراثت سے دوسرے خاوند کے بچوں کا حصہ ملے گیا؟

کیا دوسری شادی کی صورت میں پہلے خاوند کے وراثت سے دوسرے خاوند کے بچوں کا حصہ ملے گیا؟

موضوع: وراثت کی تقسیم

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد رفیق جمالی       مقام: ٹنڈو اللہ یار، پاکستان

سوال نمبر 2020:
اگر شوہر فوت ہو جائے اور اس کی اولاد نہ ہو، اور اس کی بیوی دوسری شادی کر لے، جس میں سے عورت کی اولاد ہے، کیا اس اولاد کا پہلے شوہر کی ملکیت میں‌ حق ہو گا؟ عورت فوت ہو چکی ہے تو اب وہ اس عورت کی جائیداد کس کو جائے گی؟

جواب:

عورت کی دوسری شادی کی اولاد کا پہلے شوہر کی ملکیت میں کوئی حق نہیں ہو گا۔ کیونکہ ان دونوں کے درمیان کوئی رشتہ نہیں ہے اور یہ ایک دوسرے کے لیے اجنبی ہیں لیکن عورت کو اپنے فوت شدہ خاوند کی ملکیت میں سے حق ملے گا۔

اگر عورت فوت ہو چکی ہے تو اس کے ورثاء میں اس کے ماں، باپ، خاوند اور اولاد ہیں۔ لہذا اس عورت کی جائیداد مذکورہ بالا ورثاء کو ملے گی۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-08-03


Your Comments