Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - قصر نماز کے لیے کتنے دنوں کی چھوٹ ہے؟

قصر نماز کے لیے کتنے دنوں کی چھوٹ ہے؟

موضوع: عبادات  |  نماز  |  مسافر کی نماز

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد یاسین       مقام: سیالکوٹ، پاکستان

سوال نمبر 1284:
السلام علیکم میں‌ یونیورسٹی میں‌ پڑھتا ہوں اور ہاسٹل میں‌ رہتا ہوں، کیا یہاں نماز پوری پڑھی جائے گی یا قصر کی جائے گی؟ ساتھ یہ بھی ہے کہ سٹوڈنٹس یہاں پانچ سالہ تعلیمی پروگرام کے تحت پڑھ رہے ہیں اور بعض دفعہ دو ہفتوں کے لیے آتے ہیں اور بعض دفعہ پہلے چلے جاتے ہیں۔

جواب:

اگر طلبہ جو ہاسٹلز وغیرہ میں رہتے ہیں، اور ہاسٹل اور ان کے وطن اصلی یعنی گھر کے درمیان مذکورہ بالا سفر (48 میل) ہے اور وہ ہاسٹل میں 14 دن یا اس سے تھوڑے دنوں تک رہتے ہیں اور 15 دن کی نیت نہیں کرتے۔ تو قصر نماز ادا کریں گے۔ ورنہ پوری نماز ادا کرنا پڑے گی۔ اگر یہ نیت کر لی کہ وہ دو ہفتےیا مہینہ یا دو ہفتے سے اوپر ہاسٹل میں رہیں گے تو پھر پوری نماز ادا کریں گے۔

مزید مطالعہ کے لیے نیچے دیئے گئے عنوانات پر کلک کریں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2012-01-11


Your Comments