کیا بغیر وضو قرآن پاک کو چھونا اور نماز ادا کرنے کی اجازت ہے؟

سوال نمبر:1188
کیا بغیر وضو قرآن پاک کو چھونا اور نماز ادا کرنے کی اجازت ہے؟

  • سائل: حسن یوسفمقام: لائم، ملاوی
  • تاریخ اشاعت: 17 ستمبر 2011ء

زمرہ: نماز  |  وضوء   |  تلاوت‌ قرآن‌ مجید  |  عبادات

جواب:

نماز کے لیے وضو شرط ہے بغیر وضو نماز ہرگز جائز نہیں، بلکہ عقیدہ اگر یہ ہو کہ جائز ہے تو کفر ہے۔ اگر بیمار ہو یا پانی دستیاب نہ ہو تو تیمم کرے، بلا وضو قرآن پاک کو چھونا حرام ہے، اگر جنابت نہیں تو زبانی پڑھ سکتا ہے۔ اس طرح بغیر وضو قرآن مجید کو چھونا جائز نہیں بلکہ حرام ہے۔ قرآن مجید میں ارشاد باری تعالیٰ ہے :

إِنَّهُ لَقُرْآنٌ كَرِيمٌ o فِي كِتَابٍ مَّكْنُونٍ o  لَّا يَمَسُّهُ إِلَّا الْمُطَهَّرُونَ o تَنْزِيلٌ مِّن رَّبِّ الْعَالَمِينَ o

(سورة واقعه، 56 : 77 تا 80)

بیشک یہ بڑی عظمت والا قرآن ہے (جو بڑی عظمت والے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر اتر رہا ہے) o (اس سے پہلے یہ) لوحِ محفوظ میں (لکھا ہوا) ہے o اس کو پاک (طہارت والے) لوگوں کے سوا کوئی نہیں چُھوئے گا o تمام جہانوں کے ربّ کی طرف سے اتارا گیا ہےo

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟