Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا عورت کے لیے حالت حمل میں نماز اور روزہ رکھنا ضروری ہے؟

کیا عورت کے لیے حالت حمل میں نماز اور روزہ رکھنا ضروری ہے؟

موضوع: نماز  |  عبادات  |  اسقاط حمل/عزل   |  روزہ

سوال پوچھنے والے کا نام: انجم       مقام: نامعلوم

سوال نمبر 1112:
میں 6 ماہ کی حاملہ ہوں، کیا مجھے رمضان المبارک کے روزے رکھنے چاہیئیں؟ دوران حمل روزے کی صورت میں کیا احتیاطی تدابیر ہو سکتی ہیں؟ علاوہ ازیں مجھے نماز کیسے پڑھنی چاہیئے؟ نیز کیا رکوع و سجدہ کے دوران پیٹ پر پڑنے والے دباؤ سے بچے کی نشو و نما پر برے اثرات ہو سکتے ہیں؟

جواب:
رمضان المبارک کے روزے فرض ہیں اگر حمل کی وجہ سے کوئی ایسی تکلیف ہو کہ برداشت نہ ہوسکے تو اس دن کا روزہ نہ رکھنا آپ کے لیے بہتر ہے لیکن بعد میں اس کی قضا آپ پر واجب ہے۔ اسی طرح اگر رکوع اور سجدہ کرنے میں آپ کو زیادہ تکلیف ہوتی ہے تو آپ کھڑے ہوکر یا کرسی پر بیٹھ کر نماز ادا کر سکتے ہیں، دونوں طرح جائز ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

تاریخ اشاعت: 2011-07-08


Your Comments