Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا عورتیں اپنے سر کے بال شوق اور شوہر کی مرضی سے کٹوا سکتی ہیں؟

کیا عورتیں اپنے سر کے بال شوق اور شوہر کی مرضی سے کٹوا سکتی ہیں؟

موضوع: آداب   |  حجامت

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد طاہر قادری       مقام: لاہور، پاکستان

سوال نمبر 1090:
کیا عورتیں اپنے سر کے بال شوق اور شوہر کی مرضی سے کٹوا سکتی ہیں؟

جواب:

خواتین کے لیے سر کے بال کٹوانا جائز نہیں ہے، اگرچہ شوہر نے اجازت دی ہو۔ اس لیے کہ حدیث پاک میں آتا ہے:

لا طاعة فی معصية الله.

اللہ کی نا فرمانی میں کسی کی اطاعت جائز نہیں ہے۔

اور نہ شرعی امور میں شوق اور خواہش پر عمل کرنا جائز ہے۔ رواج اگر حدیث مبارکہ کے خلاف ہو تو ممنوع ہے۔ اگر موافق ہو تو درست ہے۔ چونکہ حدیث مبارکہ میں ہے :

من تشبه بقوم فهو منهم.

لہٰذا اگر خواتین بال اتنے چھوٹے کرلیں کہ مردوں کے برابر یعنی کانوں تک یا اس سے زیادہ اور کندھوں سے اوپر تک ہوں تو یہ حدود مردوں کے لیے ہیں اور عورتوں کے لیے ممنوع ہیں۔

حج کے موقع پر حکم یہ ہے کہ خواتین لقصیر اور تحلیق کی بجائے انگلیوں کے پوروں کے برابر بال کاٹ لیں۔ اس سے معلوم ہوا کہ خواتین کو لمبے بال رکھنے چاہیے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

تاریخ اشاعت: 2011-06-25


Your Comments