ولیمہ کے موقع پر نیودرا کا لین دین کرنا کیسا ہے؟

سوال نمبر:5662
السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ! جناب ہمارے یہاں اگر کسی کے بیٹے کی شادی ہوتی ہے تو لوگ اسے بطور امداد کے کچھ پیسے دیتے ہیں۔ مگر اس شرط کے ساتھ کہ میرے بیٹے کی شادی پر دوگنے پیسے دینے ہونگے۔ اسی طرح ایک دوسرے کی امداد کرنا جائز ہے؟

  • سائل: محمد اشرفمقام: کشمیر، ہندوستان
  • تاریخ اشاعت: 18 فروری 2020ء

زمرہ: معاشرت

جواب:

کسی علاقائی رسم یا کسی برادری کے رواج کے طور پر شادی کے موقع پر دی گئی رقم پر واپسی کے وقت زائد کا مطالبہ کرنا ناجائز اور ممنوع ہے، یا اس شرط کے ساتھ کسی کو مالی مدد دینا کہ واپسی کے وقت وہ اضافے کے ساتھ دی جائے گی تو یہ بھی جائز نہیں ہے۔ اگر کوئی اپنی مرضی سے اضافے کے ساتھ واپس کرے تو حرج نہیں لیکن مخصوص شرح کے ساتھ اضافے کا مطالبہ کرنا سود کے زمرے میں آئے گا۔

اس لیے صورت مسئلہ میں کسی کی شادی کے موقع پر کسی کو اس شرط پر کوئی مالی مدد دینا کہ ہماری شادی میں وہ رقم دوگنا بڑھا کر دے گا تو ایسا کرنا شرعا جائز نہیں، اگر کوئی اپنی خوشی سے آسانی کے ساتھ زائد دے تو جائز ہوگا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟