کیا عورت حالت حیض و نفاس میں قرآن کو بغیر چھوئے پڑھ سکتی ہے؟

سوال نمبر:908
کیا عورت حالت حیض و نفاس میں قرآن کو بغیر چھوئے پڑھ سکتی ہے؟

  • سائل: محمد عادلمقام: پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 20 اپریل 2011ء

زمرہ: حیض   |  نفاس   |  تلاوت‌ قرآن‌ مجید

جواب:
فقہ حنفی کی معتبر کتاب در مختار میں لکھا ہے :

ويمنع قراءة قرآن ومسه الابغلافه.

(در مختار، 1 : 293)

حائضہ اور نفاسہ کا قرآن پڑھنا اور اسے چھونا منع ہے مگر غلاف کے ساتھ چھو سکتی ہے۔

قرآن پڑھانے والی عورت کے لیے یہ جائز ہے کہ ایک ایک کلمہ پڑھائے اور مکمل آیت کی تلاوت نہ کرے۔

مثلاً عَلْمَ القُرآن دو الفاظ ہیں، تو عَلْمَ کو الگ ادا کرے گے اور القُرآن کو الگ ادا کر کے پڑھے گے نہ کہ ملا کر پڑھے۔

(شامی، درالمختار، 1 : 293)

لہذا عورت قرآن کو بطور تلاوت حالت حیض اور نفاس میں قرآن نہیں پڑھ سکتی اگرچہ زبانی ہو لیکن دعا میں مثلاً آیت الکرسی یا دیگر کلمات قرآن پڑھ سکتی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟