شلوار ٹخنوں سے اوپر نہ رکھنے پر کیا وعید ہے؟

سوال نمبر:811
یہ حدیث کہاں تک صحیح ہے کہ شلواز ٹخنوں سے اوپر رکھیں ورنہ جو حصہ ٹخنوں سے نیچے ہوگا وہ جہنم میں جائے گا۔ برائے مہربانی پھر اس زمرے میں‌ پتلون اور شلوار پہننے کا طریقہ بھی بتا دیں؟

  • سائل: عامر افضلمقام: لاہور، پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 25 مارچ 2011ء

زمرہ: پردہ و حجاب اور لباس

جواب:
مذکورہ حدیث پاک بالکل صحیح ہے اور امام بخاری نے روایت کی ہے لیکن ہمیشہ یہ اصول یاد رکھے کہ کبھی بھی قرآن مجید کی ایک آیت یا ایک حدیث پاک لے کے فیصلہ نہیں کیا جاسکتا۔ اس لیے کہ اکثر طور پر نفی اور اثبات دونوں موجود ہوتے ہیں۔ اب مذکورہ حدیث درست اور بالکل صحیح ہے لیکن بخاری شریف کی دوسری حدیث اس کی تفسیر اور تشریح کرتی ہے۔ فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہے :

لا ينظُرُ الله يوم القيامة اِلیٰ من جَرّازاده بطراً.

(صحيح بخاری)

کہ اللہ پاک قیامت کے دن اس شخص کو رحمت کی نگاہ سے نہیں دیکھے گا جس نے شلوار تکبر کی وجہ سے نیچے رکھی ہو۔

تو معلوم ہوا کہ اس میں اصل علت تکبر ہے۔ اگر تکبر اور نجاست سے محفوظ ہو تو شلوار کو ٹخنوں سے نیچے رکھنا بھی جائز ہے لیکن پھر اگر آقا علیہ الصلوۃ والسلام کے عمل مبارک پر عمل کیا جائے تو افضل اور باعث اجر و ثواب ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟