توسیع کی غرص سے مسجد کا کوئی حصہ بیت الخلاء میں تبدیل کرنا کیسا ہے؟

سوال نمبر:5946
مسجد میں ترمیم کے پیش نظر مسجد شرعی کے کسی حصے کو بیت الخلاء میں تبدیل کر سکتے ہیں؟

  • سائل: محمد عمیرمقام: سیالکوٹ
  • تاریخ اشاعت: 02 مارچ 2021ء

زمرہ: مسجد کے احکام و آداب

جواب:

مسجد کی تعمیرِ نو کے سلسلے میں اگر بیت الخلاء کی جگہ تبدیل کرنا مقصود ہے تو یہ مصالح مسجد میں سے ہے۔ ایسی صورت میں اگر نقشہ کے مطابق بیت الخلاء ایسی جگہ پر آ رہی ہیں جہاں پہلے مسجد شرعی تھی تو بامر مجبوری ایسا کرنا جائز ہے۔فقہی قاعدہ ہے کہ ’الْأُمُورُ بِمَقَاصِدِهَا‘ یعنی ہرکام کی اچھائی اور برائی کا دارومدار اس کے مقصد پر ہے۔ مسئلہ ہذا میں مسجدِ شرعی کی جگہ کسی اور استعمال میں لانے کا مقصد مسجد کی اہانت یا اسے غیرآباد کرنا نہیں بلکہ یہ تغیر و تبدل مسجد میں توسیع کی غرض سے ہو رہا ہے اور مقصود نمازیوں کے لیے آسانی پیدا کرنا ہے، اس لیے یہ جائز ہے۔ جواب کی مزید وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجیے:

کیا مسجد کو ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنا جائز ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟