Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - خلع اور تنسیخ نکاح سے کونسی طلاق واقع ہوتی ہے؟

خلع اور تنسیخ نکاح سے کونسی طلاق واقع ہوتی ہے؟

موضوع: طلاق   |  خلع کے احکام

سوال پوچھنے والے کا نام: عون ثناءاللہ       مقام: کرک

سوال نمبر 5162:

السلام علیکم! خلع اور تنسیخ نکاح سے کونسی طلاق واقع ہوتی ہے؟

جواب:

خلع اور تنسیخ نکاح سے طلاق بائن واقع ہوتی ہے جیسا کہ حضرت عبداللہ ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے:

أَنَّ النَّبِيَّ صلی الله علیه وآله وسلم جَعَلَ الْخُلْعَ تَطْلِيقَةً بَائِنَةً.

نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خلع کو طلاق بائن قرار دیا۔

  1. دار قطنی، السنن، 4: 45، رقم: 134، بیروت: دارالمعرفة
  2. أبو یعلى، معجم، 1: 196، رقم: 230، فیصل آباد: ادارة العلوم الأثریة
  3. بیهقی، السنن الکبریٰ، 7: 316، رقم: 18339، مکة المکرمة: مکتبة دار الباز

اور حضرت ابراہیم رضی اللہ عنہ سے مروی ہے:

الْخُلْعُ تَطْلِيقَةٌ بَائِنٌ وَالإِيلاَءُ وَالْمُبَارَأَةُ كَذَلِكَ.

خلع طلاق بائن ہے ، ایلاء اور لاتعلقی (کے الفاظ بولنےسےبھی طلاق بائن ہے)۔

ابن أبي شیبة، المصنف، 4: 109، رقم: 18339، ریاض: مکتبة الرشد

اور مصنف عبدالرزاق میں بھی حضرت ابراہیم رضی اللہ عنہ سے ایک روایت نقل کی گئی ہے:

الْخُلْعُ تَطْلِيقَةٌ بَائِنَةٌ وَالْخُلْعُ مَا دُونَ عِقَاصِ الرَّأْسِ وَإِنَّ الْمَرْأَةَ لَتَفْتَدِيَ بِبَعْضِ مَالِهَا.

خلع طلاق بائن ہے اور خلع سر کے جوڑے سے بھی کم تر ہو سکتی ہے اور عورت بعض مال دے کر جان چھڑوا سکتی ہے۔

عبد الرزاق، المصنف، 6: 481، رقم: 11752، بیروت: المکتب الاسلامی

صاحب ہدایہ فرماتے ہیں:

فَإِذَا فَعَلَا ذَلِكَ وَقَعَ بِالْخُلْعِ تَطْلِيقَةٌ بَائِنَةٌ وَلَزِمَهَا الْمَالُ.

جب ایسا کر لیا تو خلع سے ایک طلاق بائن واقع ہو گی اور عورت پر مال دینا لازم ہو گا۔

  1. مرغیانی، الهدایة شرح البدایة، 2: 113، المکتبة الاسلامیة
  2. ابن همام، شرح فتح القدیر، 4: 211، بیروت: دار الفکر

جب شوہر بیوی کے حقوق پورے کرنے سے قاصر ہو اور طلاق بھی نہ دے تو ایسی صورت میں عورت علیحدگی کے لئے عدالت سے رجوع کرسکتی ہے، جیسے صاحب ہدایہ بیان کرتے ہیں:

فَإِذَا امْتَنَعَ نَابَ الْقَاضِي مَنَابَهُ فَفَرَّقَ بَيْنَهُمَا وَلَا بُدَّ مِنْ طَلَبِهَا لِأَنَّ التَّفْرِيقَ حَقُّهَا "وَتِلْكَ الْفُرْقَةُ تَطْلِيقَةٌ بَائِنَةٌ."

جب خاوند اس پر آمادہ نہ ہو قاضی خود اس (خاوند) کا قائمقام ہوکر دونوں میں تفریق کردے چونکہ یہ بیوی کا حق ہے، لہٰذا اس کا مطالبہ کرنا ضروری ہے''اور یہ تفریق و تنسیخ طلاق بائن ہوگی۔''

مرغیناني، الهدایة شرح البدایة، 2: 26، المکتبة الإسلامیة

فتاویٰ ہندیہ میں بھی عدالتی تنسیخ کو طلاق بائن قرار دیا گیا ہے:

إنْ اخْتَارَتْ الْفُرْقَةَ أَمَرَ الْقَاضِي أَنْ يُطَلِّقَهَا طَلْقَةً بَائِنَةً فَإِنْ أَبَى فَرَّقَ بَيْنَهُمَا... وَالْفُرْقَةُ تَطْلِيقَةٌ بَائِنَةٌ.

اگر بیوی جدائی چاہتی ہے تو قاضی (عدالت) اس کے خاوند کو طلاق بائن دینے کا حکم دے۔ اگر انکار کرے تو قاضی دونوں میں تفریق کردے یہ فرقت طلاق بائن ہوگی۔

الشیخ نظام وجماعة من علماء الهند، الفتاوی الهندیة، 1: 524، دار الفکر

مذکورہ بالا تصریحات سے معلوم ہوا کہ خلع و تنسیخ نکاح سے طلاق بائن واقع ہوتی ہے اور فوراً نکاح ٹوٹ جاتا ہے، لہٰذا خلع وتنسیخ کے بعد بغیر تجدید ِنکاح رجوع نہیں ہو سکتا۔ اگر کوئی جوڑا از سرِ نو بطورِ زن و شو تعلقات قائم کرنا چاہے تو باہمی رضا مندی سے دوران عدت یا عدت کے بعد تجدید نکاح کرسکتے ہیں مگر یاد رہے کسی اور سے نکاح کرنے کے لئے عورت پر عدت گزارنا لازم ہوگی اور عدت کے بعد وہ جہاں چاہے دستور کے مطابق نکاح کرسکتی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2018-11-24


Your Comments