ایسے برقی پیغامات کا کیا حکم ہے جن کے فروغ کو محبتِ‌ رسول کی علامت کہا گیا ہو؟

سوال نمبر:4814
السلام علیکم! ہمارے معاشرے میں تقریبا ہر فرد کے موبائل پر ایسے اسلامی میسجز آتے ہیں جن میں صدقات نماز روزہ یا کسی بهی موضوع پر قرآن و حدیث کے حوالوں کے ساتھ طویل تحریر میں اجر ثواب کمانے کے اسلامی طریقے اور دینی و دنیاوی فائدوں کی تفصیل ہوتی ہے. اور سب سے آخر میں ایک حدیث کا حوالہ دے کر کچھ اس طرح کے الفاظ لکھے ہوتے ہیں کہ... "اس وقت سب سے افضل کام".. "اس وقت سب سے عظیم صدقہ".. "اس وقت سب سے افضل عمل".. "اللہ کو مانتے ہو".. "اگر محمد صلی اللہ وعلیہ وسلم سے محبت ہے" وغیرہ وغیرہ جیسے پیغامات کے ساتھ موضوع میں بیان کی گئی قرآن و حدیث، تمام عبادات، تمام طرح کے صدقات پر میسج آگے بھیجنے کو افضل ترین عمل بتایا جاتا ہے. جنت کی بشارت دی جاتی ہے. سوال: میسجز آگے بھیج کر میسجز کے ذریعے صدقہ/صدقہ جاریہ کرنے کی شرعی حیثیت کیا ہے؟

  • سائل: محمد ساجد عباسیمقام: گوادر
  • تاریخ اشاعت: 31 اکتوبر 2018ء

زمرہ: جدید فقہی مسائل

جواب:

قرآنِ مجید میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:

كُنتُمْ خَيْرَ أُمَّةٍ أُخْرِجَتْ لِلنَّاسِ تَأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَتَنْهَوْنَ عَنِ الْمُنكَرِ وَتُؤْمِنُونَ بِاللّهِ وَلَوْ آمَنَ أَهْلُ الْكِتَابِ لَكَانَ خَيْرًا لَّهُم مِّنْهُمُ الْمُؤْمِنُونَ وَأَكْثَرُهُمُ الْفَاسِقُونَ.

تم بہترین اُمّت ہو جو سب لوگوں (کی رہنمائی) کے لئے ظاہر کی گئی ہے، تم بھلائی کا حکم دیتے ہو اور برائی سے منع کرتے ہو اور اللہ پر ایمان رکھتے ہو، اور اگر اہلِ کتاب بھی ایمان لے آتے تو یقیناً ان کے لئے بہتر ہوتا، ان میں سے کچھ ایمان والے بھی ہیں اور ان میں سے اکثر نافرمان ہیں۔

آل عِمْرَان، 3: 110

اس آیتِ مبارکہ میں اللہ تعالیٰ نے امتِ مسلمہ کو بہترین امت کے خطاب سے نوازا ہے جس کے تین اسباب ہیں:

  1. بھلائی کا حکم دینا
  2. برائی سے روکنا
  3. اللہ تعالیٰ پر ایمان رکھنا

اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ امر بالمعروف اور نہی عن المنکر نہ صرف نیک عمل ہے بلکہ اسی کے سبب امتِ مسلمہ کے سر فضیلت کا سہرا سجایا گیا ہے۔ فروغِ علم، اصلاح نفس اور تبلیغِ دین بلاشبہ صدقہ جاریہ ہیں مگر ان امور کو کسی بھی شرط کے ساتھ مشروط کرنا درست نہیں۔ خاص طور پر اپنے پیغامات پھیلانے کے لیے یہ کہنا کہ ’اگر ایمان ہے تو آگے پھیلاؤ‘ یا ’جو آگے نہیں بھیجے گا اس کا فلاں فلاں نقصان ہو جائے گا‘ یہ عمل سراسر ناجائز اور روحِ اسلام کے خلاف ہے۔ دعوتِ دین کا بہترین انداز قرآنِ مجید نے ان الفاظ میں بیان کیا ہے:

ادْعُ إِلَى سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ أَعْلَمُ بِمَن ضَلَّ عَن سَبِيلِهِ وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ.

(اے رسولِ معظّم!) آپ اپنے رب کی راہ کی طرف حکمت اور عمدہ نصیحت کے ساتھ بلائیے اور ان سے بحث (بھی) ایسے انداز سے کیجئے جو نہایت حسین ہو، بیشک آپ کا رب اس شخص کو (بھی) خوب جانتا ہے جو اس کی راہ سے بھٹک گیا اور وہ ہدایت یافتہ لوگوں کو (بھی) خوب جانتا ہے۔

النَّحْل، 16: 125

اس لیے نیکی پھیلانے کا احسن انداز یہی ہے کہ لوگوں تک قرآن و حدیث حکمت کے ساتھ پہنچا دی جائے اور اسے قبول یا رد کرنے یا آگے پھیلانے کا اختیار مخاطب کی مرضی پر چھوڑ دیا جائے۔ یہی طریقہ اللہ تعالیٰ کے برگزیدہ رسولوں نے اپنایا اور اسی کی ہمیں تلقین کی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟