Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا یتیم پوتا دادی کے ترکہ میں حصہ دار ہے؟

کیا یتیم پوتا دادی کے ترکہ میں حصہ دار ہے؟

موضوع: وراثت کی تقسیم

سوال پوچھنے والے کا نام: شاہ زمان       مقام: پاکستان

سوال نمبر 4756:
میری دادی کے نام زمین تھی جس پر گھر بنا ہوا تھا، اب دادی کا انتقال ہو گیا ہے اور دادا پہلے ہی وفات پا چکے ہیں۔ دادی کی اولاد میں 3 بیٹے اور تین بیٹیاں ہیں‘ جس میں سے سب سے بڑے بیٹے کا انتقال ہو چکا ہے۔ دادی والے مکان میں سب سے بڑا بیٹا رہتا ہے۔ اگر ہم یہ زمین فروخت کریں‌ تو کس کو کتنا حصہ ملے گا؟

جواب:

اگر آپ کے دادا کی وفات دادی کی وفات سے پہلے ہو گئی تھی تو دادی کی تمام وراثت اولاد میں تقسیم ہوگی۔ تقسیم کا اصول وہی ہے جو قرآنِ مجید میں اللہ تعالیٰ نے بیان کیا ہے کہ:

يُوصِيكُمُ اللّهُ فِي أَوْلاَدِكُمْ لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْأُنثَيَيْنِ.

اللہ تمہیں تمہاری اولاد (کی وراثت) کے بارے میں حکم دیتا ہے کہ لڑکے کے لئے دو لڑکیوں کے برابر حصہ ہے۔

النساء، 4: 11

اگر کوئی بیٹا ماں سے پہلے فوت ہو گیا ہے تو اس کی اولاد دادی کے ترکہ میں حصہ دار نہیں ہے، اگر بعد میں فوت ہوا ہے تو ماں کی وراثت میں اس کا حصہ ہے جو اب اس کی اولاد کو مل جائے گا۔

اگر آپ کی دادی کی وفات کے وقت تین بیٹے اور تین بیٹیاں زندہ تھے تو دادی کے ترکہ کو کل نو (9) حصوں میں تقسیم کیا جائے گا‘ ہر لڑکے کو دو اور ہر لڑکی کو ایک حصہ ملے گا۔ لیکن اگر دادی کی وفات کے وقت ان کے ورثاء دو بیٹے اور تین بیٹیاں موجود تھیں تو دادی کے کل ترکہ کو سات حصوں میں تقسیم کیا جائے گا‘ ہر بیٹے کو دو حصے اور ہر بیٹی کو ایک حصہ دیا جائے گا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2018-03-10


Your Comments