Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - صلاۃ التسبیح‌ میں‌ اگر تسبیحات بھول جائیں تو کیا حکم ہے؟

صلاۃ التسبیح‌ میں‌ اگر تسبیحات بھول جائیں تو کیا حکم ہے؟

موضوع: نماز تسبیح

سوال پوچھنے والے کا نام: فضل الرحمان حنیف       مقام: کوئٹہ

سوال نمبر 4732:
اگر صلوة التسبیح ادا کرتے ہوئے تسبیحات میں غلطی ہو جائے تو آدمی کیا کرے۔

جواب:

صلوٰۃ التسبیح کی ہر رکعت میں 75 مرتبہ تسبیح پڑھی جاتی ہے اور چار رکعات میں‌ یہ عدد 300 پورا کرنا ہوتا ہے۔ صلاۃ‌ التسبیح ادا کرتے ہوئے اگر کسی رکن میں تسبیح پڑھنا بھول جائے یا تعداد میں شک پیدا ہو جائے تو اس سے اگلے رکن میں اس کو پورا کیا جائے گا۔ مثلاً اگر رکوع میں تسبیحات پڑھنا بھول گئے ہیں‌ تو پہلے سجدے میں پڑھ لیں، اسی طرح پہلے سجدہ کی دوسرے سجدہ میں اور دوسرے سجدہ کی اگلی رکعت میں کھڑے ہو کر پڑھ لیں۔ رکوع سے کھڑے ہونے کے بعد اور دو سجدوں کے درمیان جلسہ میں بھولی ہوئی تسبیحات نہیں پڑھی جائے گی۔

اگر کسی رکن کی تسبیحات بھول گئیں اور اس کے بعد والے رکن میں بھی یہ بھولی ہوئی تسبیحات نہیں‌ پڑھیں‌ تو آخری قعدہ میں التحیات سے پہلے پڑھ لیں۔ اگر بھول جانے والی تسبیحات نہیں‌ پڑھیں تو سجدہ سہو واجب نہیں ہوگا، البتہ صلوٰۃ التسبیح نہیں ہوگی بلکہ صرف نفل کا ثواب ملے گا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2018-02-26


Your Comments