مَنی ایکسچینج سے رقم لینے کیلئے ایجنٹ کی خدمات حاصل کرنا جائز ہے؟

سوال نمبر:4715
السلام علیکم مفتی صاحب! میں کچھ ویب سائٹس پر آرٹیکلز لکھتا ہوں جس کے لیے وہ مجھے اعزازیہ دیتے ہیں۔ یہ ویب سائٹس کیونکہ برطانیہ اور امریکہ وغیرہ کی ہیں‌ تو وہ پیسے بھیجنے کے لیے پےپال (PayPal)، ویب منی (WebMoney) وغیرہ کی سہولت استعمال کرتے ہیں۔ پے پال اور ویب منی میں رقم یونٹس کی صورت میں ہوتی ہے جسے بعد میں کرنسی سے بدل لیا جاتا ہے۔ مختلف ممالک میں ان کے رجسٹرڈ ایجنٹس ہوتے ہیں جو ان یونٹس کو کرنسی سے بدل دیتے ہیں۔ پاکستان میں پے پال وغیرہ کی سروس نہیں‌ ہے اس لیے میں ایجنٹس کو اپنے یونٹس بیچ کر اس سے رقم پاکستانی بینک میں‌ لے لیتا ہوں۔ کیا ایسا کرنا درست ہے؟

  • سائل: عاصممقام: لاہور
  • تاریخ اشاعت: 27 فروری 2018ء

زمرہ: جدید فقہی مسائل

جواب:

اس میں‌ شرعاً کوئی قباحت نہیں۔ پاکستان میں‌ جن مَنی ایکسچینج کمپنیوں کی سروس نہیں‌ ہے (جیسے پے پال) اس سے رقم وصول کرنے کے لیے ایجنٹ‌ کی خدمات حاصل کرنا اور اسے اس کی اجرت دینا بھی شرعاً و قانوناً جائز ہے۔ جب قانوناً اس کی اجازت ہے تب تک شرعاً بھی کوئی ممانعت نہیں‌ ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟