Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا ایامِ استحاضہ میں عمرہ کی ادائیگی درست ہے؟

کیا ایامِ استحاضہ میں عمرہ کی ادائیگی درست ہے؟

موضوع: عمرہ   |  استحاضہ کے احکام

سوال پوچھنے والے کا نام: رابعہ نور       مقام: كراچی

سوال نمبر 4482:
السلام علیکم! ماہواری کے ایام مکمل ہونے کےبعد عام دنوں میں کسی عورت کو پیٹ میں‌ رسولی کی وجہ سے خون آتا ہے۔ کیا اس خون آنے سے عمرہ کی ادائیگی پر فرق پڑتا ہے؟

جواب:

ارشادِ نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہے:

عَنْ عَائِشَةَ قَالَتْ جَائَتْ فَاطِمَةُ بِنْتُ أَبِي حُبَیْشٍ إِلَي النَّبِيِّ فَقَالَتْ یَا رَسُولَ اﷲِ إِنِّي امْرَأَةٌ أُسْتَحَاضُ فَلَا أَطْهُرُ أَفَأَدَعُ الصَّلَاةَ فَقَالَ رَسُولُ اﷲِ لَا إِنَّمَا ذٰلِکِ عِرْقٌ وَلَیْسَ بِحَیْضٍ فَإِذَا أَقْبَلَتْ حَیْضَتُکِ فَدَعِي الصَّلَاةَ وَإِذَا أَدْبَرَتْ فَاغْسِلِي عَنْکِ الدَّمَ ثُمَّ صَلِّي قَالَ وَقَالَ أَبِي ثُمَّ تَوَضَّئِي لِکُلِّ صَلَاةٍ حَتَّي یَجِیئَ ذٰلِکَ الْوَقْتُ.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ فاطمہ بنت ابو حُبیش نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں حاضر ہو کر عرض کی: یا رسول اللہ! میں مستحاضہ ہوں، پاک نہیں ہوتی تو کیا نماز چھوڑ دوں؟ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: نہیں، یہ تو خونِ رگ ہے، حیض تو نہیں۔ جب تمہارے حیض کے دن آئیں تو نماز چھوڑ دیا کرو اور جب گزر جائیں تو غسل کر کے خون دھویا کرو۔ اور نماز پڑھا کرو۔ میرے والد محترم نے فرمایا کہ پھر ہر نماز کے لیے وضو کر لیا کرو یہاں تک کہ ایام حیض آ جائیں۔

  1. بخاري، الصحیح، 1: 91، رقم: 226، بیروت، لبنان: دار ابن کثیر الیمامة
  2. أبي داؤد، السنن، 1: 78، رقم: 292، دار الفکر
  3. ترمذي، السنن، 1: 217- 218، رقم: 125، بیروت، لبنان: دار احیاء التراث العربي

اس حدیثِ مبارکہ سے معلوم ہوا کہ حیض و نفاس کے علاوہ بیماری کی وجہ سے آنے والے مسلسل خون کو دھوکر ہر نماز کے لیے نیا وضو کر کے نماز ادا کرنا لازم ہے۔ باقی امور جو حیض و نفاس کی وجہ سے ممنوع قرار دیئے گئے ہیں ان کا بجالانا بھی جائز ہے۔ اس لیے بیماری کی وجہ سے آنے والے خون سے عمرہ کی ادائیگی پر کوئی فرق نہیں پڑتا ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2017-10-31


Your Comments