مفقود الخبر شوہر کا کتنا عرصہ انتظار کیا جائے گا؟

سوال نمبر:4258
السلام و علیکم! کیا فرماتے ہیں علماء دین ومفتیان شرع متین مسئلہ ذیل کے بارے میں کہ ہندہ کا شوہر خالد ایک سفر کے درمیان غائب ہو گیا، غائب ہوئے تقریباً چار سال ہوگئے مگر اس کا کچھ پتہ نہیں چلا۔ اب ہندہ شادی کرنا چاہتی ہے، کیا ہندہ شادی کرسکتی ہے؟

  • سائل: محمد عزیزالرحمٰن خانمقام: گھاٹ نوادہ دلسنگھ سرائے، بہار، انڈیا
  • تاریخ اشاعت: 30 مئی 2017ء

زمرہ: نکاح   |  طلاق

جواب:

جس عورت کا خاوند مفقود الخبر (غائب) ہو وہ امام مالک رضی اللہ عنہ کے فتویٰ کے مطابق چار سال تک شوہر کا انتظار کر کے کسی اور جگہ حسب منشاء عقد نکاح کر سکتی ہے۔

احناف کا فتوی آج کل اسی قول پر ہے۔ ہماری دانست میں مذکورہ عورت کو مجسٹریٹ کے روبرو پیش ہو کر اور اپنے خاوند کے مفقود الخبر ہونے کا ثبوت دے کر، دوسری شادی کا اجازت نامہ حاصل کر کے دوسری شادی کر لینی چاہیے۔ جب شادی کا حکم بھی معلوم ہو گیا اور مجسٹریٹ کا اجازت نامہ بھی مل گیا تو پہلے شوہر کے واپس آنے کی صورت میں بھی کوئی مسئلہ پیدا نہیں ہو گا۔ کیونکہ اس طرح شرعی مسئلہ کو ریاستی تحفظ حاصل ہو گا۔ یہ عورت دوسرے خاوند کی ہی بیوی رہے گی، پہلے سے کوئی تعلق نہ ہو گا۔ البتہ پہلے شوہر کے ذمے اگر حق مہر یا چار سال کا خرچہ واجب الادا ہے، عورت چاہے بذریعہ عدالت وصول کرے، چاہے تو معاف کرسکتی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟