Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کتوں‌ کی خرید و فروخت کا کیا حکم ہے؟

کتوں‌ کی خرید و فروخت کا کیا حکم ہے؟

موضوع: خریدو فروخت (بیع و شراء، تجارت)   |  حرام جانوروںکی خریدو فروخت

سوال پوچھنے والے کا نام: وزیر خان       مقام: فیصل آباد

سوال نمبر 3964:
السلام علیکم!‌ مجھے یہ جاننا ہے کہ کتوں‌ کا کاروبار کرنا، ان کی خرید و فروخت کرنے کا کیا حکم ہے؟

جواب:

فقہائے احناف کے نزدیک ہر وہ چیز جس سے نفع اٹھایا جائے اس کی تجارت جائز ہے۔ سکھائے ہوئے کتوں اور دوائیں بنانے کے لیے سانپوں کی تجارت جائز ہے۔ اسی طرح بلی اور وحشی درندوں، پرندوں کی خرید و فروخت درست ہے۔

ہماری تحقیق کے مطابق جن روایات میں کتا پالنے یا رکھنے کی ممانعت کی گئی ہے ان سے مراد ذاتی اور خانگی رعب و داب کے لیے پالا گیا کتا ہے۔ اسی طرح دھونس جمانے، راہ چلتے لوگوں کو ایذا پہنچانے، لڑانے، شرطیں لگانے اور جوا کھیلنے کے لیے کتا پالنا جائز نہیں۔ اگر اس طرح کے برے مقاصد نہ ہوں تو کتا، بلی، چرند پرند، درند وغیرہ حفاظت یا شکار کیلئے رکھنا اور پالنا بھی جائز اور ان کی خرید وفروخت بھی جائز ہے۔ مزید وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجیے:

کتوں اور بلیوں کے کاروبار کا کیا حکم ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2016-07-21


Your Comments