Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - والدہ، بیوی، دو بیٹوں اور بیٹی کی موجودگی میں‌ وراثت کی تقسیم کیا ہوگی؟

والدہ، بیوی، دو بیٹوں اور بیٹی کی موجودگی میں‌ وراثت کی تقسیم کیا ہوگی؟

موضوع: وراثت کی تقسیم

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد سہیل       مقام: کراچی

سوال نمبر 3647:
السلام علیکم! کچھ ماہ قبل میرے والد صاحب انتقال کر گئے ہیں۔ انہوں نے وراثت میں‌ ایک گھر چھوڑا ہے جس میں ہم لوگ نیچے والے حصے میں رہتے ہیں اور اوپر والا حصہ کرائے پر دیا ہو‌ا ہے۔ ہم دو بھائی، ایک بہن اور ایک والدہ ہیں، جبکہ ہماری دادی بھی زندہ ہیں۔ راہنمائی فرمایے کہ اس صورت میں واثت کی تقسیم کیسے ہوگی؟ اس کے علاوہ والد صاحب ملٹری سے ریٹائرڈ ہیں، ان کی پینشن کس طرح‌ تقسیم ہوگی؟

جواب:

اپنے سوال میں آپ بتایا کہ مرحوم کے ورثاء میں والدہ، ایک بیوی، دو بیٹے اور ایک بیٹی شامل ہیں۔ ان ورثاء کی موجودگی میں وراثت کی تقسیم یوں ہوگی کہ مرحوم کی والدہ کو کل ترکہ کا چھٹا اور بیوی کو کل ترکہ کا ہی آٹھواں حصہ ملے گا۔ والدہ اور بیوی کو ان کے مقررہ حصے دینے کے بعد باقی مال کے پانچ برابر حصے کیے جائیں گے جن میں ہر بیٹے کو دو دو اور بیٹی کو ایک حصہ دیا جائے گا۔

دوسرا سوال آپ نے پنشن کی تقسیم سے متعلق کیا جس کے جواب میں ہماری رائے یہ ہے کہ اگر ملٹری کے اصول و ضوابط میں خاوند کی وفات کے بعد بیوی کو پینشن دینے کی شق شامل ہے تو پھر یہ حق صرف بیوہ کا ہے، لیکن اگر قواعد و ضوابط میں پینشن صرف بیوی کو دینے کی شرط نہیں بلکہ ورثاء کو دینے کا قاعدہ ہے تو پھر پینشن بھی تمام ورثاء میں اسی نسبت سے تقسیم ہوگی جس نسبت سے وراثت تقسیم کی گئی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2015-06-08


Your Comments