ماں کا بچے کو دودھ بخشنے سے کیا مراد ہے؟

سوال نمبر:3515
السلام علیکم! مرنے کے بعد ماں کا بچے کو اپنا دودھ بخشنا، کیا اس کا کوئی شرعی جواز ہے؟

  • سائل: محمد سلیممقام: الٰہ آباد
  • تاریخ اشاعت: 21 فروری 2015ء

زمرہ: والدین کے حقوق

جواب:

یہ ایک محاوراتی بات ہے۔ بچے کو پیٹ میں اٹھانے سے لے کر جنم دینے اور سالوں تک پروش کرنے میں ایک ماں جو مشکلات برداشت کرتی ہے، بچہ ساری زندگی ان کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔ اسی لیے شریعت اسلامیہ نے ایک ماں کو بےشمار حقوق عطا کرتے ہوئے جنت کو ماں کے قدموں تلے تلاش کرنے کا حق دیا۔ جب ماں یہ محارہ بولتی ہے کہ ’’میں نے اپنے فلاں بچے کو دودھ بخش دیا‘‘ تو اس کا مطلب ہوتا ہے کہ اس نے اپنے حقوق میں کم پیشی کو معاف کر دیا۔ اور اگر محاورہ اِس کے برعکس بولا تو مراد ہے کہ ماں نے اپنے حقوق میں کم پیشی کو معاف نہیں کیا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟