Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - ماں کا بچے کو دودھ بخشنے سے کیا مراد ہے؟

ماں کا بچے کو دودھ بخشنے سے کیا مراد ہے؟

موضوع: والدین کے حقوق و فرائض

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد سلیم       مقام: الٰہ آباد

سوال نمبر 3515:
السلام علیکم! مرنے کے بعد ماں کا بچے کو اپنا دودھ بخشنا، کیا اس کا کوئی شرعی جواز ہے؟

جواب:

یہ ایک محاوراتی بات ہے۔ بچے کو پیٹ میں اٹھانے سے لے کر جنم دینے اور سالوں تک پروش کرنے میں ایک ماں جو مشکلات برداشت کرتی ہے، بچہ ساری زندگی ان کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔ اسی لیے شریعت اسلامیہ نے ایک ماں کو بےشمار حقوق عطا کرتے ہوئے جنت کو ماں کے قدموں تلے تلاش کرنے کا حق دیا۔ جب ماں یہ محارہ بولتی ہے کہ ’’میں نے اپنے فلاں بچے کو دودھ بخش دیا‘‘ تو اس کا مطلب ہوتا ہے کہ اس نے اپنے حقوق میں کم پیشی کو معاف کر دیا۔ اور اگر محاورہ اِس کے برعکس بولا تو مراد ہے کہ ماں نے اپنے حقوق میں کم پیشی کو معاف نہیں کیا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2015-02-21


Your Comments