Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا خطبہ کے بغیر نکاح قائم ہوجائے گا؟

کیا خطبہ کے بغیر نکاح قائم ہوجائے گا؟

موضوع: نکاح   |  ارکان نکاح   |  شرائط نکاح   |  وکالت نکاح

سوال پوچھنے والے کا نام: عمران شیخ       مقام: کوئٹہ

سوال نمبر 3461:
السلام علیکم! کیا خطبہ نکاح‌ کے بغیر نکاح ہوجاتا ہے؟ اگر کوئی عورت کسی مجلس میں‌ کہے کہ فلاں‌ شخص میرا شوہر ہے تو کیا اس کے ایسا کہنے کو ایجاب و قبول تصور کیا جائے گا؟

جواب:

نکاح کا خطبہ شرعی طور پر مسنون ہے۔ اس سے مقصود خیر و برکت کا حصول اور حقوقِ زوجین سے متعلق وعظ و نصیحت ہے۔ بہتر یہ ہے کہ خطبہ نکاح بلاوجہ چھوڑا نہ جائے، لیکن بغیر خطبہ کے بھی نکاح منعقد ہو جاتا ہے۔ نکاح کے انعقاد کے لیے لڑکی اور لڑکے کے علاوہ دو عینی گواہوں کی موجودگی شرط ہے۔ صاحبِ ہدایہ نے اس کی وضاحت ان الفاظ میں کی ہے کہ:

لا ینعقد نکاح المسلمین الا بحضور شاهدین حرین عاقلین بالغین مسلیمین رجلین او رجل و امراتین.

دو مسلمانوں (لڑکے اور لڑکی) کا نکاح دو آزاد، عاقل، بالغ اور مسلمان مردوں یا ایک مرد اور دو عورتوں کی گواہی یا شہادت کے بغیر منعقد نہیں ہوتا۔

مرغینانی، الهدایه، 1: 190، المکتبة الاسلامیة

اگر لڑکا یا لڑکی دونوں میں سے کوئی ایک نکاح کی مجلس (تقریب) میں خود موجود نہ ہو تو اس کے وکیل اور اس وکیل کی وکالت پر دو گواہوں کا موجود ہونا ضروری ہے۔ ان تین لوگوں کے علاوہ دو مرد یا ایک مرد اور دوعورتیں بطور گواہانِ نکاح کی موجودگی میں ایجاب و قبول کے بعد نکاح قائم ہوتا ہے۔ فریقِ ثانی بھی اپنا وکیل اور وکیل بننے کے دوگواہ مزید مقرر کر سکتا ہے۔ لڑکا اور لڑکی خود موجود ہونے کی صورت میں بھی اپنا وکیل مقرر کر سکتے ہیں۔ بہرحال دو گواہوں کے بغیر نکاح منعقد نہیں ہوتا۔

بصورت مسئلہ عورت کا صرف یہ کہہ دینا کہ ’’فلاں شخص میرا شوہر ہے‘‘ اس سے نکاح منعقد نہیں ہوتا، جب تک لڑکا یا اس کا وکیل قبول نہ کرے۔ کیونکہ نکاح کے انعقاد کے لیے ایک فریق کا ایجاب اور دوسرے کا قبول کرنا ضروری ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2015-01-21


Your Comments