Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - نمازِ فجر کے دوران طلوعِ آفتاب ہو جانےسے نماز کا کیا حکم ہے؟

نمازِ فجر کے دوران طلوعِ آفتاب ہو جانےسے نماز کا کیا حکم ہے؟

موضوع: نماز کے اوقات   |  مکروہ اوقات

سوال پوچھنے والے کا نام: سلمان بیگ       مقام: لاہور

سوال نمبر 3422:
السلام علیکم! میں‌ نے سنا ہے کہ اگر نمازِ فجر کے دوران سورج طلوع ہو جائے، تو بھی نماز ہو جاتی ہے۔ کیا یہ بات درست ہے؟

جواب:

طلوع آفتاب (سورج نکلتے وقت)، وقت استواء ( جب سورج بالکل درمیان میں ہوتا ہے) اور غروب آفتاب (سورج ڈوبتے وقت) نماز پڑھنا جائز نہیں ہے، جیسا کہ احادیث مبارکہ میں ہے:

عَنْ مُوسَی بْنِ عُلَيٍّ عَنْ اَبِیهِ قَالَ سَمِعْتُ عُقْبَةَ بْنَ عَامِرٍ الْجُهَنِيَّ یَقُولُا ثَـلَاثُ سَاعَاتٍ کَانَ رَسُولُ اﷲِصلیٰ الله علیه وآله وسلمیَنْهَانَا اَنْ نُصَلِّيَ فِیهِنَّ اَوْ اَنْ نَقْبُرَ فِیهِنَّ مَوْتَانَا حِینَ تَطْلُعُ الشَّمْسُ بَازِغَةً حَتَّی تَرْتَفِعَ وَحِینَ یَقُومُ قَائِمُ الظَّهِیرَةِ حَتَّی تَمِیلَ الشَّمْسُ وَحِینَ تَضَیَّفُ الشَّمْسُ لِلْغُرُوبِ حَتَّی تَغْرُبَ

موسیٰ بن علی اپنے والد سے بیان کرتے ہیں، وہ کہتے ہیں کہ میں نے حضرت عقبہ بن عامر جہنی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے سنا ہے کہ حضور نبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم ہمیں تین اوقات میں نماز پڑھنے اور اموات کو دفن کرنے سے روکتے تھے: ایک طلوع آفتاب کے وقت جب تک وہ بلند نہ ہو جائے، دوسرا ٹھیک دوپہر کے وقت یہاں تک کہ زوال نہ ہو جائے، تیسرا غروبِ آفتاب کے وقت تاوقتیکہ وہ مکمل غروب نہ ہو جائے۔

  1. مسلم، الصحیح، 1: 568، رقم: 831، دار احیاء التراث العربي بیروت
  2. احمد بن حنبل، المسند، 4: 152، رقم: 17415، موسسة قرطبة مصر

عَنِ ابْنِ عُمَرَ اَنَّ رَسُولَ اﷲِ صلیٰ الله علیه وآله وسلم قَالَ لَا یَتَحَرَّی اَحَدُکُمْ فَیُصَلِّي عِنْدَ طُلُوعِ الشَّمْسِ وَلَا عِنْدَ غُرُوبِهَا

حضرت عبد اﷲ ابن عمر رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: تم میں سے کوئی سورج طلوع ہوتے وقت اور سورج غروب ہوتے وقت نماز پڑھنے کا قصد نہ کرے۔

  1. بخاري، الصحیح، 1: 212، رقم: 560، دار ابن کثیر الیمامة بیروت
  2. مسلم، الصحیح، 1: 567، رقم: 828
  3. احمد بن حنبل، المسند، 2: 33، رقم: 4885
  4. امام مالک، الموطا، 1: 220، رقم: 515، دار احیاء التراث العربي مصر

عَنِ ابْنِ عُمَرَ قَالَ قَالَ رَسُولُ اﷲِصلیٰ الله علیه وآله وسلم إِذَا بَدَا حَاجِبُ الشَّمْسِ فَاَخِّرُوا الصَّلَاةَ حَتَّی تَبْرُزَ وَإِذَا غَابَ حَاجِبُ الشَّمْسِ فَاَخِّرُوا الصَّلَاةَ حَتَّی تَغِیبَ

حضرت ابن عمر رضی اﷲ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: جب سورج کا کنارہ ظاہر ہو جائے تو نماز کو اس وقت تک موقوف رکھو جب تک سورج اچھی طرح ظاہر نہ ہو جائے اور جب سورج کا کنارہ غائب ہو جائے تو نماز کو اس وقت تک موقوف رکھو جب تک سورج مکمل غائب نہ ہو جائے۔

  1. بخاري، الصحیح، 1: 212، رقم: 558
  2. مسلم، الصحیح، 1: 568، رقم: 829

عَنْ حَکِیمِ بْنِ حَکِیمٍ وَهُوَ ابْنُ عَبَّادِ بْنِ حُنَیْفٍ اَخْبَرَنِي نَافِعُ بْنُ جُبَیْرِ بْنِ مُطْعِمٍ قَالَ اَخْبَرَنِي ابْنُ عَبَّاسٍ اَنَّ النَّبِيَّ صلیٰ الله علیه وآله وسلم قَالَ اَمَّنِي جِبْرِیلُ عِنْدَ الْبَیْتِ مَرَّتَیْنِ فَصَلَّی الظُّهْرَ فِي الْاُولَی مِنْهُمَا حِینَ کَانَ الْفَيْئُ مِثْلَ الشِّرَاکِ ثُمَّ صَلَّی الْعَصْرَ حِینَ کَانَ کُلُّ شَيْئٍ مِثْلَ ظِلِّهِ ثُمَّ صَلَّی الْمَغْرِبَ حِینَ وَجَبَتْ الشَّمْسُ وَاَفْطَرَ الصَّائِمُ ثُمَّ صَلَّی الْعِشَائَ حِینَ غَابَ الشَّفَقُ ثُمَّ صَلَّی الْفَجْرَ حِینَ بَرَقَ الْفَجْرُ وَحَرُمَ الطَّعَامُ عَلَی الصَّائِمِ وَصَلَّی الْمَرَّةَ الثَّانِیَةَ الظُّهْرَ حِینَ کَانَ ظِلُّ کُلِّ شَيْئٍ مِثْلَهُ لِوَقْتِ الْعَصْرِ بِالْاَمْسِ ثُمَّ صَلَّی الْعَصْرَ حِینَ کَانَ ظِلُّ کُلِّ شَيْئٍ مِثْلَیْهِ ثُمَّ صَلَّی الْمَغْرِبَ لِوَقْتِهِ الْاَوَّلِ ثُمَّ صَلَّی الْعِشَائَ الْآخِرَةَ حِینَ ذَهَبَ ثُلُثُ اللَّیْلِ ثُمَّ صَلَّی الصُّبْحَ حِینَ اَسْفَرَتِ الْاَرْضُ ثُمَّ الْتَفَتَ إِلَيَّ جِبْرِیلُ فَقَالَ یَا مُحَمَّدُ هَذَا وَقْتُ الْاَنْبِیَائِ مِنْ قَبْلِکَ وَالْوَقْتُ فِیمَا بَیْنَ هَذَیْنِ الْوَقْتَیْنِ

حضرت ابن عباس رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے حضور نبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: جبریلِ امین نے دو مرتبہ بیت اللہ شریف کے پاس میری امامت کی۔ پہلی مرتبہ ظہر کی نماز اس وقت پڑھی جب سایہ جوتے کے تسمے کے برابر ہو گیا، عصر اس وقت پڑھی جب ہر شے کا سایہ اس کی مثل ہو گیا، پھر مغرب کی نماز اس وقت پڑھی جب سورج غروب ہوا اور روزہ دار نے روزہ افطار کیا، پھر عشاء کی نماز شفق کے غائب ہونے پر پڑھی، صبح کی نماز طلوع فجر کے وقت ادا کی جس وقت روزہ دار پر کھانا حرام ہو جاتا ہے۔ دوسری مرتبہ ظہر کی نماز اس وقت پڑھی جب ہر چیز کا سایہ اس کی مثل ہو جاتا ہے اور یہ وہ وقت ہے جس میں پہلی مرتبہ عصر کی نماز ادا کی تھی، پھر ہر شے کا سایہ دو مثل ہونے پر نماز عصر پڑھی، مغرب پہلے وقت پر ادا کی، عشاء کی نماز رات کا ایک تہائی گزرنے پر پڑھی، پھر صبح کی نماز اس وقت پڑھی جب زمین روشن ہو گئی۔ اس کے بعد حضرت جبریل نے میری طرف متوجہ ہو کر کہا اے محمد (صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم)! آپ سے پہلے انبیاء کا وقت نماز یہی ہے اور ان دو وقتوں کے درمیان نماز کا وقت ہے۔

ترمذي، السنن، 1: 280، رقم: 149

عَنْ اَبِي هُرَیْرَةَ قَالَ قَالَ رَسُولُ اﷲِصلیٰ الله علیه وآله وسلم إِنَّ لِلصَّلَاةِ اَوَّلًا وَآخِرًا وَإِنَّ اَوَّلَ وَقْتِ صَلَاةِ الظُّهْرِ حِینَ تَزُولُ الشَّمْسُ وَآخِرَ وَقْتِهَا حِینَ یَدْخُلُ وَقْتُ الْعَصْرِ وَإِنَّ اَوَّلَ وَقْتِ صَلَاةِ الْعَصْرِ حِینَ یَدْخُلُ وَقْتُهَا وَإِنَّ آخِرَ وَقْتِهَا حِینَ تَصْفَرُّ الشَّمْسُ وَإِنَّ اَوَّلَ وَقْتِ الْمَغْرِبِ حِینَ تَغْرُبُ الشَّمْسُ وَإِنَّ آخِرَ وَقْتِهَا حِینَ یَغِیبُ الْاُفُقُ وَإِنَّ اَوَّلَ وَقْتِ الْعِشَائِ الْآخِرَةِ حِینَ یَغِیبُ الْاُفُقُ وَإِنَّ آخِرَ وَقْتِهَا حِینَ یَنْتَصِفُ اللَّیْلُ وَإِنَّ اَوَّلَ وَقْتِ الْفَجْرِ حِینَ یَطْلُعُ الْفَجْرُ وَإِنَّ آخِرَ وَقْتِهَا حِینَ تَطْلُعُ الشَّمْسُ

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: نماز کا ایک وقت آغاز ہے اور ایک وقت انتہا۔ ظہر کا ابتدائی وقت سورج کا زوال ہے اور آخری وقت جب وقت عصر داخل ہو جائے۔ عصر کا ابتدائی وقت جب یہ وقت (عصر کا) داخل ہو جائے اور آخری وقت جب سورج کا رنگ پیلا پڑ جائے۔ مغرب کا پہلا وقت غروب آفتاب ہے اور آخری وقت شفق کا غائب ہونا ہے۔ عشاء کا وقت شفق کے غائب ہوتے شروع ہوتا ہے اور نصف رات کو آخری وقت ہے۔ صبح کا پہلا وقت طلوع فجر ہے اور انتہائی وقت طلوع آفتاب ہے۔

  1. احمد بن حنبل، المسند، 2: 232، رقم: 7172
  2. ترمذي، السنن، 1: 284، رقم: 151

عَنْ عَبْدِ اﷲِ بْنِ اَبِي قَتَادَةَ عَنْ اَبِیهِ قَالَ سِرْنَا مَعَ النَّبِيِّ صلیٰ الله علیه وآله وسلم لَیْلَةً فَقَالَ بَعْضُ الْقَوْمِ لَوْ عَرَّسْتَ بِنَا یَا رَسُولَ اﷲِ قَالَ اَخَافُ اَنْ تَنَامُوا عَنِ الصَّلَاةِ قَالَ بِلَالٌ اَنَا اُوقِظُکُمْ فَاضْطَجَعُوا وَاَسْنَدَ بِلَالٌ ظَهْرَهُ إِلَی رَاحِلَتِهِ فَغَلَبَتْهُ عَیْنَاهُ فَنَامَ فَاسْتَیْقَظَ النَّبِيُّ صلیٰ الله علیه وآله وسلم وَقَدْ طَلَعَ حَاجِبُ الشَّمْسِ فَقَالَ یَا بِلَالُ اَیْنَ مَا قُلْتَ قَالَ مَا اُلْقِیَتْ عَلَيَّ نَوْمَةٌ مِثْلُهَا قَطُّ قَالَ إِنَّ اﷲَ قَبَضَ اَرْوَاحَکُمْ حِینَ شَائَ وَرَدَّهَا عَلَیْکُمْ حِینَ شَائَ یَا بِلَالُ قُمْ فَاَذِّنْ بِالنَّاسِ بِالصَّلَاةِ فَتَوَضَّاَ فَلَمَّا ارْتَفَعَتْ الشَّمْسُ وَابْیَاضَّتْ قَامَ فَصَلَّی

عبداﷲ بن ابوقتادہ سے روایت ہے کہ ان کے والد ماجد نے فرمایا: ہم نبی کریم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ رات کے وقت سفر کر رہے تھے۔ بعض لوگ عرض گزار ہوئے: یا رسول اللہ! کاش! آپ ہمارے ساتھ آرام فرماتے۔ فرمایا: مجھے ڈر ہے کہ تم نماز کے وقت سوئے نہ رہو۔ حضرت بلال نے کہا: میں آپ لوگوں کو جگا دوں گا۔ سب لیٹ گئے اور حضرت بلال نے بھی سواری سے اپنی پیٹھ لگالی۔ اُن کی آنکھیں اُن پر غالب آئیں (یعنی نیند غالب آگئی) اور سو گئے۔ پھر نبی کریم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم بیدار ہوئے جبکہ سورج کا کنارا طلوع ہو چکا تھا۔ فرمایا کہ اے بلال! تم نے کیا کہا تھا؟ عرض گزار ہوئے کہ ایسی نیند مجھ پر کبھی نہیں ڈالی گئی تھی۔ فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے جب چاہا تمہاری روحوں کو قبض کر لیا اور جب چاہا تمہاری طرف لوٹا دیا۔ اے بلال! کھڑے ہو جاؤ اور لوگوں کو نماز کے لیے بلاؤ۔ پھر وضو کیا اور جب سورج بلند اور سفید ہو گیا تو کھڑے ہوئے اور نماز پڑھی۔

  1. بخاري، الصحیح، 1: 214، رقم: 570
  2. ابي داود، السنن، 1: 120، رقم: 439

عَنْ اَبِي هُرَیْرَةَ اَنَّ رَسُولَ اﷲِ صلیٰ الله علیه وآله وسلم قَالَ مَنْ اَدْرَکَ مِنْ الصُّبْحِ رَکْعَةً قَبْلَ اَنْ تَطْلُعَ الشَّمْسُ فَقَدْ اَدْرَکَ الصُّبْحَ وَمَنْ اَدْرَکَ رَکْعَةً مِنْ الْعَصْرِ قَبْلَ اَنْ تَغْرُبَ الشَّمْسُ فَقَدْ اَدْرَکَ الْعَصْرَ

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: جس نے سورج طلوع ہونے سے پہلے صبح کی ایک رکعت پا لی تو اس نے صبح کی نماز پا لی، اور جس نے سورج غروب ہونے سے پہلے عصر کی ایک رکعت پا لی اس نے نماز عصر پا لی۔

  1. بخاري، الصحیح، 1: 211، رقم: 554
  2. مسلم، الصحیح، 1: 424، رقم: 608
  3. ترمذي، السنن، 1: 353، رقم: 186
  4. امام مالک، الموطا، 1: 6، رقم: 5

حضرت علامہ علی بن سلطان محمد القاری المعروف ملا علی قاری، مذکورہ بالا حدیث مبارکہ کی شرح فرماتے ہوئے لکھتے ہیں:

رسول اکرم صلیٰ اللہ علیہ و آلہ وسلم کا یہ فرمانا کہ ’مَنْ اَدْرَکَ مِنْ الصُّبْحِ رَکْعَةً‘ امام بغوی رحمہ اﷲ علیہ فرماتے ہیں کہ ’رکعةً‘ سے مراد اس کے رکوع اور سجود ہیں، اور یہ فرمان بطورِ تغلیب ہے۔’من الصبح‘ یعنی فجر کی نماز۔ ’قَبْلَ اَنْ تَطْلُعَ الشَّمْسُ فَقَدْ اَدْرَکَ الصُّبْحَ‘ ابن الملک فرماتے ہیں کہ اس کا مطلب ہے کہ اس نے فجر کا وقت پا لیا۔ اگر وہ پہلے نماز کا اہل نہیں تھا، پھر وہ اہل ہو گیا۔ اگر ایک رکعت کے بقدر بھی وقت بچ گیا تو وہ نماز اس کے ذمہ لازم ہو گئی۔ ایک قول کے مطابق اس کا معنی یہ ہے کہ اس نے نماز کی فضیلت پا لی۔’وَمَنْ اَدْرَکَ رَکْعَةً مِنْ الْعَصْرِ قَبْلَ اَنْ تَغْرُبَ الشَّمْسُ فَقَدْ اَدْرَکَ الْعَصْرَ‘ امام نووی رحمہ اﷲ علیہ نے امام ابو حنیفہ رحمہ اﷲ علیہ کا یہ قول نقل کیا ہے کہ طلوعِ شمس کے ساتھ ہی صبح کی نماز باطل ہو جاتی ہے، کیونکہ نہی عن الصلوٰۃ کا وقت داخل ہو گیا ہے، بخلاف غروب شمس کے، اور یہ حدیث ان کے خلاف دلیل ہے اور اس کا جواب یہ ہے کہ صدر الشریعہ نے کتب اصولِ فقہ سے نقل کرتے ہوئے کہا ہے کہ جزئِ مقارن وجوب صلوٰۃ کی ادائیگی کے لئے سبب ہوتا ہے اور عصر کا آخری وقت، وقتِ ناقص ہے، کیونکہ وہ سورج کی عبادت کا وقت ہے۔ لہٰذا اس وقت میں نماز بھی ناقص واجب ہوئی۔ تو جب وہ ادا کرے گا تو وہ ویسی ہی ادا کرے گا جیسی واجب ہوئی تھی، پھر اگر درمیان میں غروبِ شمس کی وجہ سے فساد آجائے تو اس سے نماز فاسد نہیں ہوگی۔ جب کہ فجر کا تمام وقت، وقتِ کامل ہے، کیونکہ سورج کے طلوع سے قبل اس کی عبادت نہیں کی جاتی تو سورج طلوع ہوتے وقت نماز بھی کامل ہی واجب ہوئی۔ لیکن جب نماز کے طلوع شمس کی وجہ سے فساد آ گیا تو اس سے نماز فاسد ہو جائے گی، کیونکہ نماز جیسی واجب ہوئی تھی ویسی نہیں ادا کر رہا۔ اگر یہاں یہ اعتراض کیا جائے کہ یہ معرضِ نص میں تعلیل ہے تو اس کا جواب ہم یہ دیتے ہیں کہ جب اس حدیث اور اوقاتِ ثلاثہ میں نہی عن الصلوٰۃ والی روایت میں تعارض آ گیا تو ہم نے ضابطہ کے مطابق قیاس کی جانب رجوع کیا اور قیاس نمازِ عصر میں اس حدیث کو ترجیح دیتا ہے اور فجر میں حدیث نہی کو ترجیح دیتا ہے۔ دیگر باقی نمازیں اوقاتِ ثلاثہ مکروہہ میں حدیثِ نہی کی وجہ سے جائز نہیں ہیں، کیونکہ اس حدیث کے معارض کوئی روایت نہیں ہے۔ (متفق علیہ) میرک فرماتے ہیں کہ اسے چاروں ائمہ نے نقل کیا ہے۔

ملا علی قاري، مرقاة المفاتیح، 2: 285، 286، دار الکتب العلمیة بیروت

خلاصہ کلام:

مذکورہ بالا تصریحات کی روشنی میں نماز پنجگانہ کے آخری اوقات کی وضاحت بالترتیب درج ذیل ہے:

  1. نماز فجر کا وقت سورج طلوع ہونے پر ختم ہوجاتا ہے۔ اگر نمازِ فجر شروع کی اور دوران نماز سورج طلوع ہوگیا تو نماز فاسد ہوجائے گی۔ سورج بلند ہونے کے بعد اس نماز کو قضاء پرھا جائے گا۔
  2. نماز ظہر اگر آخری وقت میں شروع کی جائے تو دوران نماز وقت عصر شروع ہونے سے بھی نماز ظہر کی ادائیگی بغیر کراہت ہو جائے گی، کیونکہ ظہر اور عصر کے درمیان کوئی مکروہ اوقات نہیں۔
  3. نماز عصر کا کامل وقت سورج کا رنگ زرد ہونے سے پہلے تک ہے۔ جب سورج کے رنگ زرد ہوجائے تو اسے عصر کے لیے وقت ناقص کہتے ہیں۔ اگر نمازِ عصر ناقص وقت میں ادا کی یا ناقص وقت میں شروع کی اور دوران نماز سورج غروب ہوگیا، ان دونوں صورتوں میں نماز ناقص طور پر ادا ہوگی۔ یعنی فرض تو ادا ہوگیا لیکن کامل ادائیگی نہیں ہوئی۔ بہتر ایسی نماز کی قضاء پڑھی جائے۔
  4. نمازِ مغرب کا آخری وقت شفق کا غائب ہو جانا ہے۔ امام اعظم ابوحنیفہ کے نزدیک سورج غروب ہونے کے بعد افق پر سرخی کے بعد جو سفیدی پھیلتی ہے اسے شفق کہتے ہیں۔ اس سفیدی یا شفق کے غائب ہونے سے نماز مغرب کا وقت ختم ہوجاتا ہے۔ نمازِ مغرب اگر آخری وقت میں شروع کی جائے، اور دوران نماز وقت عشاء شروع ہونے سے بھی نماز مغرب کامل طور پر ادا ہوجائے گی۔ کیونکہ مغرب اور عشاء کے درمیان کوئی مکروہ اوقات نہیں ہیں۔
  5. نمازِ عشاء کا وقت صبح صادق کے شروع ہونے سے پہلے تک ہے۔ اگر نمازِ عشاء آخری وقت میں شروع کی اور دوران نماز فجر کا وقت شروع ہو گیا تو نماز عشاء ادا ہو جائے گی۔

نوٹ:

کسی بھی نماز کا وقت گزر جانے کے بعد صرف فرض اور واجب کی قضاء لازم ہے، سنن اور نوافل کی نہیں۔ اگر فجر کی سنتیں رہ جائیں تو سورج بلند ہونے کے بعد وقت استواء سے پہلے ان کی قضاء پڑھ سکتے ہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2015-03-05


Your Comments