نعلینِ پاک کا بوسہ لینے کا کیا حکم ہے؟

سوال نمبر:3224
السلام علیکم! نعلینِ پاک کا بوسہ لینے کا کیا حکم ہے؟

  • سائل: غلام فریدمقام: پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 30 مئی 2014ء

زمرہ: ادب و تکریم مصطفٰی ﷺ

جواب:

ارشادِ باری تعالیٰ ہے:

ذَلِكَ وَمَن يُعَظِّمْ شَعَائِرَ اللَّهِ فَإِنَّهَا مِن تَقْوَى الْقُلُوبِ۔

(الحج، 32:22)

یہی (حکم) ہے، اور جو شخص اﷲ کی نشانیوں کی تعظیم کرتا ہے (یعنی ان جانداروں، یادگاروں، مقامات، احکام اور مناسک وغیرہ کی تعظیم جو اﷲ یا اﷲ والوں کے ساتھ کسی اچھی نسبت یا تعلق کی وجہ سے جانے پہچانے جاتے ہیں) تو یہ (تعظیم) دلوں کے تقوٰی میں سے ہے (یہ تعظیم وہی لوگ بجا لاتے ہیں جن کے دلوں کو تقوٰی نصیب ہوگیا ہو).

لہٰذا نعلینِ پاک کا بوسہ لینا سعادت کی بات ہے، کیونکہ اس کی نسبت بہت بلند ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟