Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - اسٹیٹ بینک سے الحاق کی صورت میں اسلامک بینکنگ کیسے ممکن ہے؟

اسٹیٹ بینک سے الحاق کی صورت میں اسلامک بینکنگ کیسے ممکن ہے؟

موضوع: جدید فقہی مسائل

سوال پوچھنے والے کا نام: احتشام علی       مقام: میرپور (آزاد کشمیر)

سوال نمبر 2855:
السلام علیکم! میرا سوال ہے کہ سٹیٹ بینک آف پاکستان کے ساتھ تمام بینکوں کا الحاق ہونے کی صورت میں بینک میں اسلامک بینکنگ کا کیسے ممکن ہے؟

جواب:

اسلامک بینکنگ کا بنیادی اصول یہ ہے کہ اس میں سرمائے کا استعمال شراکت کی بنیاد پر ہونا چاہیے۔ اس اصول کے پیشِ نظر مضاربت، مشارکہ، اجارہ، مرابحہ، استصناع وغیرہ کچھ حدود کے اندر اور کچھ شرائط کے ساتھ جائز ہیں۔ جو بینک شراکت کے اصول و ضوابط کے مطابق لین دین کرتا ہے اسے اسلامک بینکنگ میں شمار کیا جائے گا۔ آئینِ پاکستان، ملک میں سود سے پاک مالیاتی نظام کے قیام پر زور دیتا ہے اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان غیرسودی و اسلامی بینکاری سے میں رکاوٹ نہیں ہے۔ اس لیے یہ خیال کرنا کہ سٹیٹ بینک آف پاکستان سے الحاق کرنے کے بعد کوئی بینک اسلامی اصولوں کے مطابق کام نہیں کر سکتا، درست نہیں۔ سٹیٹ بینک آف پاکستان کی اصلاحات کے باعث کئی بینک اسلامی بینکاری سے منسلک ہوگئے ہیں جس سے ملک میں اسلامی بینکاری کا نظام تیزی سے فروغ پارہا ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2016-02-09


Your Comments