کیا مشروط طلاق میں‌ عرف عام کے الفاظ کا معنی لیا جائے گا؟

سوال نمبر:2721
السلام علیکم ورحمۃ اللہ حضور اس مسئلہ کے بارے میں وضاحت طلب ہے کہ زید نے حلف اٹھایا طلاق معلق کی صورت مٰیں وہ یہ کہ اگر میں نے فلاں کے گھر اگر غمی خوشی میں آیا گیا تو میری بیوی مجھ پر طلاق۔۔۔۔ اب پوچھنا یہ ہے کہ اس طرح کے الفاظ زید کے ہاں عرف میں یہ مراد لیے جاتے ہیں کہ میرا پورا گھرانہ اس کے گھر میں نہیں جائے گا۔۔۔ اور انہی الفاظ میں زید کے ہاں یہ بھی عرف ہے کہ صرف زید کی ذات مراد ہو اس کا پورا گھرانہ مراد نہ ہو۔ حضور ایسی صورت حال میں کیا زید اکیلا اس کے گھر جائے گا تب حانث ہو گا۔ گھر کا کوئی فرد بھی جائے گا زید حانث ہو جائے گا؟

  • سائل: محمد مشتاق رضا گولڑویمقام: گجرات، پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 24 اگست 2013ء

زمرہ: طلاق

جواب:

اس سے دوسرے گھر والوں کا کوئی تعلق نہیں ہے اس نے جب کہا ہے (اگر میں فلاں کے گھر غمی خوشی میں آیا گیا) مراد وہ اکیلا ہی ہو گا۔ جب بھی وہ ان کے گھر جائے گا اس کی بیوی کو طلاق ہو جائے گی۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟