Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا شعبان المعظم کی 15 تاریخ کو روزہ رکھنا حدیث سے ثابت ہے؟

کیا شعبان المعظم کی 15 تاریخ کو روزہ رکھنا حدیث سے ثابت ہے؟

موضوع: روزہ  |  فضیلت روزہ

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد مجيب الرحمن       مقام: قطر

سوال نمبر 2666:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ شعبان المعظم کی 15 تاریخ کو روزہ رکھنا کیسا ہے کیا حدیث سے ثابت ہے؟

جواب:

پندرہ شعبان المعظم کو روزہ رکھنا مستحب ہے۔ حدیث مبارکہ میں ہے:

عن علی ابن أبی طالب قال قال رسول الله صلی الله علیه وآله وسلم اذا کانت لیلة النصف من شعبان فقوموا لیلها وصوموا نهارها فان الله ینزل فیها لغروب الشمس الی سماء الدنیا فیقول : الا من مستغفرلی فاغفرله؟ الا مسترزق فارزقه؟ الا مبتلی فاعا فیه الا کذا؟ الا کذا؟ حتی یطلع الفجر.

حضرت علی رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جب شعبان کی پندرہویں رات ہو تو رات کو قیام کرو۔ دن میں روزہ رکھو کیونکہ اللہ تعالی اس رات میں سورج غروب ہوتے ہی آسمان دنیا کی طرف متوجہ ہو جاتا ہے اور فرماتا ہے کون مجھ سے مغفرت طلب کرتا ہے کہ میں اس کی مغفرت کروں؟ کون مجھ سے رزق طلب کرتا ہے کہ میں اسے رزق دوں؟ کون مبتلائے مصیبت ہے کہ میں اسے عافیت دوں؟ اسی طرح صبح تک ارشاد ہوتا رہتا ہے۔

ابن ماجہ، السنن، 444:1، رقم : 1388، دار الفکر بیروت

لہذا جو مسلمان پندرہ شعبان المعظم کو روزہ رکھے گا، وہ ثواب حاصل کرے گا اور جو نہیں رکھے گا اسے گناہ نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2014-01-30


Your Comments