Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا کوئی از خود مہر کی رقم مختص کر سکتا ہے؟

کیا کوئی از خود مہر کی رقم مختص کر سکتا ہے؟

موضوع: نکاح   |  فرضیت نکاح   |  ارکان نکاح   |  حق مہر

سوال پوچھنے والے کا نام: زبیر       مقام: انڈیا

سوال نمبر 2590:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ اس دور میں مہر کی حد کیا ہے؟ کیا کوئی از خود مہر کی رقم مختص کر سکتا ہے؟ سنت نبوی صلی اللہ علیہ والہ وسلم سے کم سے کم مہر کی مقدار بتائیں؟

جواب:

حق مہر کی کم سے کم مقدار دس درہم ہے جو کہ اڑھائی تولے چاندی کے برابر ہے۔ موجودہ دور کے مطابق اڑھائی تولے چاندی کی قیمت لگا لیں جتنی بنتی ہو دے دیں۔ یاد رہے یہ کم سے کم مقدار ہے زیادہ کی کوئی حد نہیں ہے۔ مہر کی رقم مختص کرنا لڑکی کا حق ہے لڑکی جتنا کہے گی اتنا ہی دینا پڑے گا۔ دونوں باہمی رضا مندی سے بھی طے کر سکتے ہیں۔

مزید مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں
نکاح پڑھنے کا مسنون طریقہ کیا ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2013-05-22


Your Comments