کیا بیٹیاں اپنے باپ کی قضاء نمازیں‌ ادا کر سکتی ہیں؟

سوال نمبر:2511
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ اگر کوئی شخص مر جائے اور اس کی صرف بیٹیاں ہی وارث ہوں اور اس شخص کی قضاء نمازیں رہتی ہوں، اس صورت میں‌ کیا اس کی بیٹیاں اپنے والد کے لیے فدیہ دے سکتی ہیں اور کیا باپ اپنی بیٹی کے گھر سے کچھ کھا سکتا ہے؟

  • سائل: محمد سہیلمقام: کراچی، پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 04 اپریل 2013ء

زمرہ: نماز  |  عبادات

جواب:

پہلی بات یہ ہے کہ فدیہ روزوں کا ہوتا ہے نمازوں کا نہیں، لیکن احناف کے نزدیک یہ ہے کہ فدیہ دے دیا جائے، اگر قبول ہو گیا تو ٹھیک ہے، نہیں تو صدقہ ہو جائے گا اور میت کو فائدہ پہنچے گا۔ دوسری بات یہ ہے کہ باپ اپنی بیٹی کے گھر سے کھا پی سکتا ہے کوئی ممانعت نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟