Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا تارک جماعت شخص نماز جمعہ کی امامت کروا سکتا ہے؟

کیا تارک جماعت شخص نماز جمعہ کی امامت کروا سکتا ہے؟

موضوع: عبادات  |  امامت   |  نماز  |  شرائط امامت   |  نماز جمعہ

سوال پوچھنے والے کا نام: گل گوہر بگٹی       مقام: سوئی گیس فیلڈ (ضلع ڈیرہ بگٹی بلوچستان)

سوال نمبر 2306:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ کیا ایک ایسا شخص جو تارکِ جماعت ہو اور وہ اکثر نمازیں جماعت سے نہ پڑھتا ہو کیا ایسے شخص کا جمعہ کی نماز کا امامت کرانا جائز ہے؟

جواب:

گو کہ اس شخص کا یہ بہتر عمل نہیں ہے، لیکن امامت کروائے تو نماز ہو جائے گی۔ اگر وہ صحیح العقیدہ ہے، تو آپ لوگوں کو چاہیے کہ اس کو وارننگ دیں۔ اگر پھر بھی وہ نمازیں باجماعت ادا نہیں کرتا، تو کوئی اور خطیب امام رکھ لیں، جو باقاعدگی سے نماز باجماعت ادا کرتا ہو۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2012-12-13


Your Comments