Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا جنگلی بھینسے کی قربانی کرنا جائز ہے؟

کیا جنگلی بھینسے کی قربانی کرنا جائز ہے؟

موضوع: قربانی کے جانور   |  عبادات

سوال پوچھنے والے کا نام: سعد‌ الرشید       مقام: فیصل آباد

سوال نمبر 2294:
السلام‌ علیکم‌ میرا سوال یہ ہے کہ کیا‌ بھینس‌ بھینسا‌ کی‌ قربانی‌ جائز‌ ہے‌؟ اگر جائز ہے تو اس کی دلیل کیا ہے؟ کیا جنگلی بھینس کی قربانی بھی دی جا سکتی ہے اگر نہیں دے سکتے تو کیا وجہ ہے؟

جواب:

بنیادی طور پر غنم، ابل اور بقر تین اقسام کے جانور ہیں۔ جن کے بارے میں فقہا نے لکھا ہے کہ یہ قربانی کے لیے قابل قبول ہیں۔

  1. غنم میں اس کی انواع اور نر ومادہ شامل ہیں۔ یعنی بھیڑ اور بکری۔
  2. ابل سے مراد اونٹ نر ومادہ۔
  3. بقر میں بھی اس کی انواع اور نر ومادہ شامل ہیں۔ یعنی گائے اور بھینس۔

فقہائے کرام فرماتے ہیں:

واضح ہو کہ جنس واجب میں یہ ہونا چاہیے کہ قربانی کا جانور اونٹ، گائے اور غنم تین اجناس سے ہو اور ہر جنس میں اس کی نوع نر ومادہ اور خصی وفحل سب داخل ہیں۔

کیونکہ اسم جنس کا ان سب پر اطلاق کیا جاتا ہے اور معز (بھیڑ) نوع غنم ہے اور جاموس (بھینس) نوع بقر ہے۔ قربانی کے جانوروں میں سے کوئی وحشی جائز نہیں ہے۔

  1. الشيخ نظام وجماعة من علماء الهند، الفتاوی الهندية، 5 : 297 دار الفکر

  2. علاء الدين الکاسانی، بدائع الصنائع، 5 : 69، دار الکتاب العربی بيروت.

لہذا قربانی اونٹ، گائے، بھینس، بکری اور بھیڑ کی جائز ہے، لیکن جنگلی بھینس یا گائے کی قربانی جائز نہیں ہے، کیونکہ وحشی جانوروں کی قربانی جائز نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2012-12-13


Your Comments