Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - نمازی کے آگے سے گزرنے کی شرعی حد کیا ہے؟

نمازی کے آگے سے گزرنے کی شرعی حد کیا ہے؟

موضوع: عبادات  |  نماز  |   مسجد

سوال پوچھنے والے کا نام: عبد اللہ       مقام: پاکستان

سوال نمبر 2286:
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ اگر کسی جگہ زیادہ لوگ جمع ہو جائیں تو کیا وہ اسی جگہ پر جماعت قائم کریں تو جماعت کا ثواب ملے گا یا ان کو مسجد جانا پڑے گا؟ نمازی کے آگے سے گزرنے کی شرعی حد کیا ہے؟

جواب:

اگر مسجد نزدیک ہو تو پھر مسجد میں ہی جانا چاہیے، زیادہ افضل ہے، مسجد دور ہونے کی صورت میں وہیں جماعت قائم کر سکتے ہیں۔

مزید مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں
نمازیوں کے آگے سے گزرنے والے کے بارے میں‌ کیا حکم ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2012-11-19


Your Comments