کیا پلکوں، ابروؤں کا بنوانا، کٹوانا، چھیدوانا اور اکھاڑنا جائز ہے؟

سوال نمبر:2279
السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ میرا سوال یہ ہے کہ ان دنوں خواتین میں پلکیں اور ابرو بنوانے کا رواج ہے۔ اس سلسلے میں وہ بیوٹی پارلرز کا رخ بھی کرتی ہیں۔ کیا پلکوں اور ابروؤں کا بنوانا یا ابروؤں کے بال کٹوانا، چھیدوانا اور اکھاڑنا جائز ہے؟ جزاک اللہ خیرا

  • سائل: افتخار الحسنمقام: سعودی عرب
  • تاریخ اشاعت: 21 نومبر 2012ء

زمرہ: جدید فقہی مسائل

جواب:

پلکیں اور ابرو بنوانے کو راوج نہیں دینا چاہیے، جو کہ آج کل بہت عام ہوتا جا رہا ہے۔ اس کو ایک فیشن بنا دیا گیا ہے۔ ضرورت ہو یا نہ ہو اکثر عورتیں اس فیشن کو اپنا رہی ہیں۔ جس کے لیے انہیں بیوٹی پارلرز کا رخ بھی کرنا پڑتا ہے، جو ایک تکلیف دہ عمل ہے اور فضول خرچی کا ایک نیا راستہ بھی ہے۔ اس لیے اگر پلکوں یا ابروؤں کے بال بدصورتی کا سبب نہ ہوں، تو ان کو کٹوانا، چھیدوانا یا اکھاڑنا بالکل جائز نہیں ہے۔ ہاں اگر یہ بال کسی کے چہرے کی بدصورتی کا سبب بن رہے ہوں، تو اس کو اجازت ہے کہ وہ ان اضافی بالوں کو مناسب طریقے سے ختم کر دے۔

امام ابو یوسف رحمۃ اللہ تعالی علیہ فرماتے ہیں:

لا بأس بأخذ الحاجبين و شعر وجهه ما لم يشبه بالمخنث

ابرو اور چہرے کے بال اکھاڑنے میں کوئی حرج نہیں، جب تک کہ ہجڑوں سے مشابہت نہ ہو۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟