Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا شریعت میں طلاق سے بچنے کا کوئی حیلہ ہے؟

کیا شریعت میں طلاق سے بچنے کا کوئی حیلہ ہے؟

موضوع: معاملات  |  فقہ اور اصول فقہ  |  طلاق   |  سرقہ (چوری)

سوال پوچھنے والے کا نام: میر عالم       مقام: کراچی، پاکستان

سوال نمبر 2122:
کیا فرماتے ہیں علماء کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ ایک شخص پرائیویٹ کمپنی میں‌ جاب کرتا ہے اور اس کمپنی میں‌ چوری ہو گئی۔ کمپنی والوں‌ نے تمام عملے کو بلا کر ایک تحریر نامہ پر دستخط کروائے اور اس شخص نے بھی اس کاغذ پر دستخط کر دیے کہ میں‌ چور کو جانتا ہوں۔ اس تحریر کا کچھ خلاصہ اس طرح سے ہے کہ میں حلفیہ کہتا ہوں کہ میں نے چوری نہیں‌ کی اور نہ ہی میں‌ چور کو جانتا ہوں، اگر میں نے چوری کی یا میں چور کو جانتا ہوں تو میں جب جب نکاح کروں یا جب جب وطی کروں اس کی بیوی کو تین طلاق ہے ہوں اور اس چور نے بھی سائن کر دیے۔ میں شادی شدہ ہوں اور اس چور کی شادی ہونے والی ہے۔ مہربانی فرما کر قرآن وحدیث اور فقہ کی روشنی میں کوئی حیلہ بتائیں میں بہت پریشان ہوں۔

جواب:

آپ درخواست لکھیں اور کمپنی والوں کو جمع کروائیں اور بتائیں کہ جھوٹ بولا سزا کے لیے تیار ہوں اور معافی کے لیے درخواستگار ہوں۔ قسم توڑ کر کفارہ دیں ورنہ پوری زندگی شادی نہیں ہو سکے گی۔ اگر شادی کی تو فورا طلاق ہو جائے گی اور پھر بھی اگر ساتھ رہے تو پوری زندگی حرام کریں گے، لہذا کمپنی والوں کو سچ بتائیں قسم توڑ کر کفارہ ادا کریں اور اللہ تعالی سے معافی مانگیں۔

مزید مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں
قسم توڑنے کا کفارہ کیا ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2012-11-03


Your Comments