حاملہ عورت کے لیے رمضان کے روزے رکھنا کیسا ہے؟

سوال نمبر:1979
السلام علیکم میں امید سے ہوں کیا اس حالت میں رمضان کے روزے رکھنا میرے اوپر فرض ہیں؟ بعض لوگ کہتے ہیں کہ اس حالت میں روزے رکھنے سے دو روزوں کا ثواب ملتا ہے اور بعض کہتے ہیں کہ بچے کو پیٹ میں بھوکہ نہیں‌ رکھنا چاہیے۔ براہ مہربانی وضاحت کریں‌ کہ اس حالت میں عورت کو روزے رکھنے چاہیں یا نہیں؟

  • سائل: نازیہمقام: لندن
  • تاریخ اشاعت: 07 جولائی 2012ء

زمرہ: روزہ

جواب:

اگر حاملہ عورت کو روزہ رکھنے کی وجہ سے کسی قسم کے نقصان، بیماری کا خدشہ ہو یا روزہ کی وجہ سے حمل کو نقصان پہنچنے کا خوف ہو تو ایسی صورت میں حاملہ عورت پر روزہ فرض نہیں ہے۔ حمل کی وجہ سے وہ روزہ نہیں رکھے گی اور بعد میں صرف روزہ کی قضاء کرے گی اور حاملہ کو یہ رخصت دی گئی ہے کہ ایسی حالت میں وہ روزہ نہ رکھے۔ اس صورت میں حاملہ مریض کے حکم میں ہو گی۔ جیسے مریض پر روزہ فرض نہیں ہے اسی طرح حاملہ پر بھی روزہ فرض نہیں ہے اور بعد میں جتنے روزے قضاء ہونگے وہ رکھے گی۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟